Premium Content

Add

اچانک مستعفی ہونا

Print Friendly, PDF & Email

چیف جسٹس بننے کے لیے اگلی قطار میں سپریم کورٹ کے ایک جج کی اچانک رخصتی – وہ بھی، بے مثال بحران کے دور میں – ایک گہرے احساس سے پردہ اٹھاتی ہے۔

جمعرات کو بغیر کسی وارننگ کے جسٹس اعجاز الاحسن نے اپنا استعفا صدر کو بھجوا دیا اور کہا کہ وہ سپریم کورٹ کے جج کے طور پر مزید کام نہیں کرنا چاہتے۔ لاہور ہائی کورٹ کے سابق جج اور چیف جسٹس جسٹس اعجازالاحسن رواں برس اکتوبر میں موجودہ جج کی ریٹائرمنٹ کے بعد اعلیٰ ترین جج کا عہدہ سنبھالنے والے تھے۔

اس کے بجائے، انہوں نے محض چند ماہ قبل اپنے کیریئر کو مختصر کرنے کا انتخاب کیا ۔ ان کا اپنے عہدے سے مستعفی ہونا سپریم کورٹ کے ایک اور جج، ریٹائرڈ جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کی اچانک رخصتی کے بعد ہوا۔ لیکن اگرچہ مؤخر الذکر کا مستعفی ہونا حالات کے پیش نظر منطقی معلوم ہوتا ہے، جسٹس احسن نے قانونی برادری کو اپنی گرفت میں لے لیا، اور بہت سے لوگوں نے اسے انتہائی افسوسناک پیش رفت قرار دیا۔

ایسے لوگ ہیں جو مانتے ہیں کہ ان دو ججوں کی رخصتی نے بالآخر سپریم کورٹ کو نام نہاد ‘ہم خیال گروپ’ کے اثر سے پاک کر دیا ہے۔ دوسری طرف، وہ لوگ ہیں جو یہ سمجھتے ہیں کہ ان دونوں ججوں کو ان کے فقہی جھکاؤ کی وجہ سے سزا دی گئی ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

اس بحث پر جہاں بھی کوئی کھڑا ہو، اس سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ ملک کا اعلیٰ ترین فورم برائے انصاف ایک ہلچل کا سامنا کر رہا ہے جس کے براہ راست نتائج اس کے سامنے زیر التوا بہت سے اہم مقدمات پر پڑ سکتے ہیں۔ انصاف کے مفاد میں یہ بھی بتانا ضروری ہے کہ جسٹس احسن اور نقوی کو اکٹھا کرنا غلط لگتا ہے۔

جسٹس نقوی نے جس وقت مستعفی ہونا کا انتخاب کیا وہ اس وقت بدعنوانی کے سنگین الزامات کا سامنا کر رہے تھے، جبکہ جسٹس احسن کے ہاتھ ابھی تک صاف تھے۔ اور، جب ماضی میں جسٹس احسن پر انگلیاں اٹھائی گئی تھیں، مثال کے طور پر گرینڈ حیات کیس میں، زیادہ تر لوگ اس بات پر متفق نظر آتے ہیں کہ وہ بصورت دیگر ایک ’ٹھوس‘ جج تھے۔

جسٹس احسن واضح طور پر سپریم کورٹ کے اپنے معاملات کو چلانے کے انداز سے ناخوش تھے، جیسا کہ فوجی ٹرائل کے فیصلے کے خلاف اپیلوں کی سماعت کرنے والے بینچ کے خلاف ان کی مخالفت کے ساتھ ساتھ جسٹس کے خلاف سپریم جوڈیشل کونسل کی ’جلد بازی‘ کی کارروائی پر ان کی تنقید کا ثبوت ہے۔ نقوی۔ یہ دیکھتے ہوئے کہ وہ سپریم کورٹ کے اہم فیصلوں کے ذمہ دار ’گروپ آف تھری‘ کا حصہ تھے، انہیں مستعفی ہونے کے خلاف قائل کرنے کی کوشش کی جانی چاہیے تھی۔

عدالت کے اندر ہنگامہ آرائی اسے ایک بہت ہی متنازعہ مقام بنانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ ماضی میں بہت سے چیف جسٹس نے سیاست کی ہے اور عدلیہ کو ایک آمر کے طور پر چلایا ہے ۔

اگر برسراقتدار اس طرح کے واقعات سے الگ رہنا چاہتا ہے تو سپریم کورٹ میں ایسا ماحول ہونا چاہیے جہاں مختلف نظریات کے حامل جج یکساں طور پر خوش آئند ہوں۔ جس عدالت سے اختلاف رائے کو خاموش  کر دیا جائے اس سے انصاف کی توقع نہیں کی جا سکتی۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1