Premium Content

Add

اقوام متحدہ کی تازہ ترین عالمی اقتصادی صورتحال کی رپورٹ

Print Friendly, PDF & Email

پاکستان کے معاشی چیلنجز ابھی ختم نہیں ہوئے۔ اقوام متحدہ کی تازہ ترین عالمی اقتصادی صورتحال اور امکانات کی رپورٹ 2024 ہمیں ان چیلنجوں کے بارے میں بریف کرتی ہے جو اس سال سے گزریں گے اور ان سے ڈھانچہ جاتی اقتصادی اصلاحات کے ذریعے فعال طور پر نمٹا جانا چاہیے۔ اگرچہ اس سال ملک کی مجموعی گھریلو پیداوار (جی ڈی پی) میں 2 فیصد متوقع معمولی نمو ایک اچھی علامت ہے، مہنگائی، کرنسی کی قدر میں کمی، اور خود مختار قرضے جی ڈی پی کی نمو کو زیر کرنے کا امکان ہے۔ شدید معاشی بحران کے بعد 2023 کے دوسرے نصف میں ملک اپنے پیروں پر کھڑا ہونے میں کامیاب ہوا لیکن اگر اصلاحات پر مبنی پالیسیاں فوری طور پر نافذ نہ کی گئیں تو ایک اور بحران کا خطرہ منڈلاتا رہے گا۔

دو ہزار تئیس میں ملک میں مہنگائی کی ریکارڈ توڑ شرح دیکھی گئی جس کے اثرات متوسط ​​اور اعلیٰ متوسط ​​آمدنی والے گھرانوں میں بھی نمایاں تھے۔ افراط زر کے دباؤ، جیسا کہ رپورٹ میں اشارہ کیا گیا ہے، کو پیشگی حکمت عملی کے ساتھ منظم کیا جا سکتا ہے۔ حکومت کو اقتصادی بحث کو ترجیح دینی چاہیے جس میں ملک گیر معاشی مہارت شامل ہو ۔ غیر ملکی سرمایہ کاری میں آسانی اور سہولت فراہم کرنا صرف ایک پہلو ہے جو جی ڈی پی کی نمو کا وعدہ کرتا ہے لیکن پاکستان کا خود مختار قرض اس نمو کو منسوخ کرنے کے لیے کافی ہے۔ اسی طرح، اگر کرنسی کی قدر میں کمی جاری رہی تو مقامی مارکیٹ اور کاروبار مسلسل دھچکے کی حالت میں رہیں گے۔ 2024 میں پاکستان کی معیشت کی اس سنگین تصویر کی روشنی میں معاشی اصلاحات پر جامع توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ خطرناک اشاریوں کے اثرات کو پورا کرنے کے لیے جیسا کہ رپورٹ میں پیش گوئی کی گئی ہے، 8 فروری کے انتخابات کے بعد جو بھی حکومت بناتا ہے اس کے لیے فوری طور پر مضبوط اقتصادی پالیسیوں کو ترجیح دینے اور ان پر عمل درآمد کرنے کی ضرورت ہے۔ نئی حکومت کے ایجنڈے میں افراط زر کے دباؤ اور قرضوں کی پائیداری کا انتظام جیسے مسائل کو حل کرنا چاہیے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

معیشت کو مضبوط بنانے کے لیے ڈھانچہ جاتی اصلاحات اور دانشمندانہ مالیاتی انتظام کی جانب ایک ٹھوس کوشش کی ضرورت ہے تاکہ عالمی اقتصادی غیر یقینی صورتحال کے خلاف پائیدار ترقی اور لچک کو یقینی بنایا جا سکے۔ جنگ اور تنازعات کی وجہ سے دنیا بہت غیر یقینی ہے۔ جدوجہد کرنے والی معیشتوں کے لیے یہ غیر یقینی صورتحال دو دھاری تلوار ہے۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ میں پاکستان میں غذائی عدم تحفظ کا بھی ذکر کیا گیا ہے جس کا اس سال متوقع افراط زر کے دباؤ سے براہ راست تعلق ہوگا۔ اقتصادی چیلنجوں کے منفی نتائج کو کم کرنے کے لیے فوری اقدامات کیے جانے چاہئیں، اور آنے والے وقتوں میں چیلنجوں کو ختم کرنے کے لیے بصیرت سے متعلق اصلاحات کو متعارف کرانا چاہیے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1