Premium Content

Add

اسمبلیوں میں حلف برداری اور پاکستان کو درپیش چیلنجز

Print Friendly, PDF & Email

اب چاروں صوبائی اسمبلیوں اور قومی اسمبلی نے حلف اٹھا لیا ہے۔

اگرچہ دھاندلی کے الزامات اور الیکشن سے متعلق مختلف بے ضابطگیوں اور غیر قانونی کاموں نے ایک سیاہ سایہ ڈالا ہے، امید کی جاتی ہے کہ یہ اسمبلیاں عوام کی بہتر نمائندگی کریں گی اور حکمرانی کے اگلے باب کی نگرانی کریں گی۔ اس حقیقت میں کوئی شق  نہیں ہے کہ ان کے سامنے بے پناہ چیلنجز ہیں، ان چیلنجزکی حقیقت اس وقت طلوع ہونے لگے گی جب انتخابات کے بعد کی افراتفری کی دھول آباد ہونا شروع ہو جائے گی۔

ملک سماجی اور سیاسی طور پر ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے، اس کے ادارے بحران کا شکار ہیں، اس کے خزانے تقریباً خالی ہیں، اور اس کی معیشت دم توڑ رہی ہے۔ اس کے عوام اور ریاست کے درمیان معاہدہ ٹوٹتا ہوا دکھائی دے رہا ہے، اس کا انتظامی نظام خراب دکھائی دے رہا ہے ۔

غیر ملکی قرض دہندگان سے لیکویڈیٹی اور سرمائے پر انحصار کرتے ہوئے، پاکستان تباہی سے صرف چند قدموں کے فاصلے پر ہونے کی ناقابلِ رشک پوزیشن میں ہے۔

اس کے باوجود اگر ملک نے بار بار ایک چیز کا مظاہرہ کیا ہے تو وہ یہ ہے کہ اس کے عوام کی برداشت کی خواہش ناقابل تسخیر ہے۔ شہری امید کرتے رہیں گے کہ گزشتہ ہفتے کے دوران حلف اٹھانے والے مرد اور خواتین ملک کو دوبارہ استحکام اورخوشحالی کی طرف لے جا سکتے ہیں۔ اپنی اپنی اسمبلیوں میں نشستیں سنبھالنے کے بعد اب انہیں یہ ثابت کرنا ہوگا کہ وہ ان کو سونپی گئی ذمہ داری کے لیے تیار ہیں۔ لاکھوں لوگوں کی قسمت کا انحصار اس بات پر ہے کہ وہ آگے کیا راستہ اختیار کرتے ہیں۔

مشکل صورتحال کے پیش نظر حکومت اور اپوزیشن دونوں کو یہ عزم کرنا ہوگا کہ ان کے فیصلوں میں عوامی بھلائی کو کسی بھی چیز پر ترجیح دی جائے گی۔ حکومتی بینچوں کو اس بات کا ادراک ہونا چاہیے کہ گزشتہ دو سالوں میں قوم کو جن بے مثال مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے اس کی وجہ سے عوامی مزاج انتہائی حساس ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

معاشی حالات کو بہتر بنانے پر اسے ایک ساتھ کام کرنا چاہیے۔ اپوزیشن بینچوں کو یہ سمجھنا چاہیے کہ انہیں حکومت کی تعمیری رہنمائی کرنے کی ضرورت ہوگی، خاص طور پر مشترکہ اہداف کے حصول کے لیے۔

قانونی حیثیت کے سوال کو ترک نہیں کیا جا سکتا۔ جو لوگ محسوس کرتے ہیں کہ ان کے مینڈیٹ پر ڈاکہ ڈالا گیا ہے انہیں اپنی لڑائی جاری رکھنی چاہیے۔ وہ صرف اپنے ووٹروں کے ہی نہیں بلکہ پاکستان کی جدوجہد کرنے والی جمہوریت کے بھی مرہون منت ہیں کہ وہ اس کے خلاف ہونے والی غلطیوں کو درست کرنے کے لیے آگے بڑھتے ہیں۔

تاہم تمام اسٹیک ہولڈرز کی توجہ اس بات پر ہونی چاہیے کہ وہ پاکستانی عوام کے لیے کیا مستقبل چاہتے ہیں۔ قانون سازوں کو چاہیے کہ وہ اسمبلیوں میں اپنی موجودگی کا استعمال اپنے قانون سازی کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے کے لیے کریں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ ماضی اور حال کی غلطیاں مستقبل میں نہ دہرائی جائیں۔ پچھلی دہائی کے سیاسی غلط فہمیوں سے بہت کچھ سیکھا ہے۔

اب وقت آگیا ہے کہ سیاسی قیادت یہ ثابت کرے کہ وہ آگے بڑھنے کے لیے تیار ہے۔ پارلیمنٹ سب سے اہم فورم ہے جس کے ذریعے پاکستان کو گھر کہنے والے لاکھوں افراد کے لیے کل کیسا ہونا چاہیے اس پر سیاسی مذاکرات کیے جا سکتے ہیں۔ سیاستدان آگے بڑھنے کا راستہ نکالیں۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1