Premium Content

اٹھارویں ترمیم کی اہمیت: ایک تجزیہ

Print Friendly, PDF & Email

آئین (اٹھارویں ترمیم) ایکٹ2010، جوپاکستان کی آئینی تاریخ میں ایک اہم سنگ میل ہے، صرف سیاسی چالوں کا نتیجہ نہیں تھا، بلکہ پارلیمنٹ میں تمام سیاسی جماعتوں کے درمیان مقصد کے اتحاد کا ثبوت تھا۔ 102 ترامیم پر مشتمل اس ایکٹ کو نہ صرف صوبوں نے سراہا بلکہ اسے تمام سیاسی جماعتوں کی جانب سے متفقہ حمایت بھی حاصل ہوئی ، جس اس کی قانونی حیثیت اور اہمیت کو مزید واضح کیا گیا۔ اس ترمیم کے ذریعے سامنے آنے والی سب سے قابل ذکر تبدیلیوں میں سے ایک کنکرنٹ قانون سازی کا خاتمہ، صوبائی خودمختاری کے دیرینہ مطالبے کو پورا کرنا اور حکمرانی اور قدرتی وسائل کے انتظام میں صوبوں کو جائز آئینی حقوق دینا ہے۔

سب سے اہم ترامیم میں کنکرنٹ قانون سازی کی فہرست کو حذف کرنا، وفاقی قانون سازی کی فہرست میں مضامین کا اضافہ، اور تیل، گیس، اور علاقائی پانیوں کی مشترکہ ملکیت شامل ہیں۔ کنکرنٹ قانون سازی کا حذف، جس نے 47 ایسے مضامین کو ہٹا دیا جن پر پارلیمنٹ اور صوبائی اسمبلیاں دونوں قانون سازی کر سکتی تھیں، وفاقی حکومت سے صوبائی حکومتوں کو انتظامی ذمہ داریوں کی اہم منتقلی کا باعث بنی ہے۔ اقتدار میں اس تبدیلی نے، جو کہ اٹھارویں ترمیم کا ایک اہم نتیجہ ہے، نے صوبائی حکومتوں کو نمایاں طور پر بااختیار بنایا ہے۔

مزید برآں، وفاقی قانون سازی پارٹ 2 میں مضامین کے اضافے سے نہ صرف فہرست میں توسیع ہوئی ہے بلکہ مشترکہ مفادات کونسل کے کردار کو بھی تقویت ملی ہے، جو کہ بین الصوبائی رابطہ کاری کا ایک کلیدی طریقہ کار ہے۔ اس ترمیم نے فیڈریشن اور فیڈریشن اکائیوں کے ذریعے شراکتی انتظام کو فروغ دیا ہے، اب کونسل وفاقی قانون سازی کی فہرست کے حصہ 2 کے معاملات کے سلسلے میں پالیسیاں بنانے اور ان کو منظم کرنے کی ذمہ دار ہے۔ یہ متعلقہ اداروں پر نگرانی اور کنٹرول کا بھی استعمال کرتا ہے۔ وفاقی قانون سازی پارٹ 2 میں شامل کیے گئے نئے مضامین میں ریگولیٹری اتھارٹیز، پبلک ڈیٹ مینجمنٹ، اعلیٰ تعلیم اور تحقیقی اداروں کے معیارات اور بین الصوبائی معاملات اور رابطہ کاری شامل ہیں۔

مزید برآں، ترمیم کی وجہ سے تیل، گیس اور علاقائی پانیوں کی ملکیت میں تبدیلیاں آئی ہیں۔ اس نے صوبے اور وفاقی حکومت دونوں میں معدنی تیل اور قدرتی گیس کی مشترکہ اور مساوی ملکیت کسی صوبے یا اس کے ملحقہ علاقائی پانیوں میں حاصل کی ہے، جس سے ان وسائل میں صوبوں کے حق ملکیت میں اضافہ ہوتا ہے۔

مجموعی طور پر، آئین کی اٹھارویں ترمیم نے صوبائی خودمختاری کو نمایاں طور پر مضبوط کیا ہے، گورننس اور وسائل کے انتظام میں صوبوں کے کردار کو بڑھایا ہے، اور وفاقی اور صوبائی حکام کے درمیان شراکتی فیصلہ سازی اور ہم آہنگی کو فروغ دیا ہے۔

پاکستان کے آئین میں اٹھارویں ترمیم کا نفاذ محض ایک نظریاتی مشق نہیں تھی بلکہ ایک پیچیدہ عمل تھا جس میں کئی اہم مراحل اور عمل شامل تھے۔ آرٹیکل 270 اے اے کی شق 8 کے مطابق، صوبوں کو اس سے قبل ہم آہنگ قانون سازی کی فہرست میں درج معاملات کی منتقلی 30 جون 2011 تک مکمل کی جانی تھی۔ اس عمل کی نگرانی کے لیے، وفاقی حکومت نے ایک عمل درآمد کمیشن قائم کیا، جیسا کہ آرٹیکل 270 اے اے 9شق کے ذریعے لازمی قرار دیا گیا تھا۔ یہ کمیشن 4 مئی 2010 کو تشکیل دیا گیا تھا جس میں متعدد اراکین پارلیمنٹ شامل تھے جس کے چیئرمین سینیٹر میاں رضا ربانی تھے۔ اس کمیشن نے منتقلی کے عمل اور اٹھارویں ترمیم کی دیگر دفعات کے موثر نفاذ کی نگرانی اور سہولت فراہم کرنے میں ایک اہم کردار ادا کیا، ایک ہموار منتقلی اور آئینی تقاضوں کی پابندی کو یقینی بنایا۔

عمل درآمد کمیشن کو اہم اختیارات، بشمول ماہرین کو شامل  کرنے اور منتقلی کے عمل کے مقاصد کو آگے بڑھانے کے لیے ضروری ہدایات اور احکامات دینے کی صلاحیت دیے گئے تھے ۔ مزید برآں، کمیشن کو انحراف کے عمل کے نفاذ کے لیے درکار پالیسیوں، پروگراموں اور اقدامات کی جانچ پڑتال، متاثرہ قوانین کا جائزہ لینے اور منتقلی کے مالی مضمرات کا جائزہ لینے کا کام سونپا گیا تھا۔

اپنے کام کو آسان بنانے کے لیے، کمیشن نے بین الصوبائی رابطہ ڈویژن کو اپنے سیکریٹریٹ کے طور پر قائم کیا اور اس کے قواعد و ضوابط وضع کیے اور اس کی منظوری دی۔ کمیشن نے اٹھارویں ترمیم کے بروقت نفاذ کو یقینی بنانے کے لیے مختلف اقدامات کیے، جن میں قومی اقتصادی کونسل کی تازہ تشکیل کو مطلع کرنا، صوبائی حکومتوں کے رولز آف بزنس میں ترمیم، وفاقی قوانین کو تبدیل کرنے یا ان میں ترمیم کرنے کے لیے صوبائی قوانین کا مسودہ تیار کرنا، اور کیلنڈر کو یقینی بنانا شامل ہیں۔ سینیٹ آف پاکستان اور قومی اسمبلی کے اجلاس آئینی دفعات کے مطابق ہوئے۔

مزید برآں، کمیشن نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کو مشورہ دیا کہ وہ منقطع مضامین سے متعلق ٹیکس لگانے کی تجاویز پر کارروائی سے گریز کرے اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کے ارکان کی نئے سرے سے تقرری کی ضرورت پر توجہ دی۔ کمیشن نے اٹھارویں ترمیم کی متعلقہ شقوں سے مختلف دفاتر کو ان کی معلومات اور ضروری کارروائی کے لیے بھی آگاہ کیا۔

مزید برآں، کمیشن نے وزارتوں/ ڈویژنوں اور ان کے ماتحت اداروں پر تحدیدات سے مشروط پابندیاں جاری کیں، انہیں نئی ​​ذمہ داریاں پیدا کرنے یا تقرریاں کرنے سے روکا جو منتقلی کے عمل کی تکمیل کے بعد حکومت کے لیے ذمہ داریاں پیدا کر سکیں۔ یہ کئی تنظیموں کے ختم ہونے اور ملازمین کی اضافی تعداد کو حل کرنے کے لیے کیا گیا تھا۔

مجموعی طور پر، عمل درآمد کمیشن، جو کہ منتقلی کے عمل اور اٹھارویں ترمیم کی دیگر شقوں کے موثر نفاذ میں کلیدی کردار ہے، نے ایک اہم کردار ادا کیا۔ اس نے ایک ہموار منتقلی اور آئینی تقاضوں کی پابندی کو یقینی بنایا، اس طرح پاکستان کے گورننس ڈھانچے پر نمایاں اثر پڑا۔

پاکستان کے آئین میں 18ویں ترمیم وفاقیت، صوبائی خودمختاری اور کئی وجوہات کی بنا پر انحراف کے لیے اہم ہے۔ سب سے پہلے، اس نے وفاقی حکومت سے صوبائی حکومتوں کو انتظامی ذمہ داریاں منتقل کرکے صوبائی خودمختاری کو نمایاں طور پر مضبوط کیا۔ اقتدار میں اس تبدیلی نے صوبائی خودمختاری کے دیرینہ مطالبے کو پورا کیا اور حکمرانی اور قدرتی وسائل کے انتظام میں صوبوں کو جائز آئینی حقوق دیے۔

اس ترمیم نے گورننس اور وسائل کے انتظام میں صوبوں کے کردار کو بھی بڑھایا۔ اس نے کنکرنٹ قانون سازی کو ختم کر دیا، جس نے پارلیمنٹ اور صوبائی اسمبلیوں دونوں کو بعض موضوعات پر قانون سازی کرنے کی اجازت دی، اور مضامین کو وفاقی قانون سازی کی فہرست میں شامل کیا، فہرست کو وسعت دی اور مشترکہ مفادات کی کونسل کے کردار کو تقویت دی۔ اس سے وفاقی اور صوبائی حکام کے درمیان شراکتی فیصلہ سازی اور ہم آہنگی کو فروغ ملا۔

مزید برآں، 18ویں ترمیم نے صوبے اور وفاقی حکومت دونوں میں معدنی تیل اور قدرتی گیس کی مشترکہ اور مساوی ملکیت کسی صوبے یا اس کے ملحقہ علاقائی پانیوں کو فراہم کیے، جس سے ان وسائل میں صوبوں کے ملکیت کے حقوق میں اضافہ ہوا۔

منتقلی کے لحاظ سے، ترمیم نے ایک متعین وقت کے ذریعے صوبوں کو کنکرنٹ قانون سازی میں درج معاملات کی منتقلی کو لازمی قرار دیا ہے۔ عمل درآمد کمیشن کا قیام، منتقلی کے عمل کی نگرانی اور سہولت فراہم کرنے کے لیے اہم اختیارات کے ساتھ، 18ویں ترمیم کے موثر نفاذ کو یقینی بنانے کے لیے ایک اہم قدم تھا۔

مجموعی طور پر، 18ویں ترمیم نے وفاقیت کو مضبوط بنانے، صوبائی حکومتوں کو بااختیار بنانے اور اختیارات کی منتقلی کو آسان بنانے میں اہم کردار ادا کیا، اس طرح پاکستان کے اندر اختیارات اور وسائل کی زیادہ متوازن تقسیم کو فروغ دیا۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Latest Videos