Premium Content

Add

آڈیو لیکس کی تحقیقات

Print Friendly, PDF & Email

پاکستان کے مستقبل کے چیف جسٹس ، جسٹس قاضی فائز کو پی ڈی ایم حکومت نےآڈیو لیکس کے حوالے سے  تین رکنی عدالتی کمیشن کی سربراہی کا کام سونپ کر امتحان میں ڈال دیا ہے۔ یہ کمیشن حالیہ مہینوں میں لیک ہونے والی مختلف آڈیو ز کی تحقیقات اور اس بات کا تعین کرے گا کہ آیا ان کا ’آزادی‘ پر کوئی اثر پڑا ہے یا نہیں ۔ اگرچہ ’آڈیو لیکس‘نے اہم سیاستدانوں اور بیوروکریٹس سمیت متعدد طاقتور افراد کی ساکھ کو نقصان پہنچایا ہے ، حکومت صرف یہ  چاہتی ہے کہ کمیشن ان لیکس پر توجہ مرکوز کرے جس میں ججز اور ان کے اہل خانہ شامل ہیں۔

حکومت کو انکوائری کا دائرہ وسیع کرنے کا اختیار ہے۔ یہ  ضروری ہے کہ پہلے طے کیا جائے کہ ان ریکارڈنگز پر کس نے، کس مقصد کے لیے، اور کس قانونی منظوری کے تحت ایسا کیا ہے ۔ اس سے قبل سب جانتے ہیں کہ  جسٹس قاضی  اور ان کے خاندان کو اس سے پہلے ان کے ذاتی مالی معاملات کی غیر قانونی تحقیقات قرار دیے جانے والے جعلی نتائج پر کس طرح تکلیف اٹھانی پڑی تھی۔ کمیشن کو کم از کم عوامی مفاد میں ایسے عناصر کو بے نقاب کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔یہ حوصلہ افزا ہے کہ کمیشن نے فیصلہ کیا ہے کہ اس کی کارروائی کو عام کیا جائے گا۔ عوام کی جانب سے کمیشن کی سرگرمیوں اور طرز عمل کو دیکھنے کے ساتھ، اسے دوسروں کے لیے پیروی کرنے کے لیے ایک مثال قائم کرنے کے لیے منفرد طور پر رکھا گیا ہے۔ بہت سے لوگوں کو سینئر جج سے بہت زیادہ توقعات ہیں۔ اس کی ایک جھلک دیکھنا دلچسپ ہو گا کہ عدلیہ جلد ہی اس ادارے کی سرپرستی میں کیا رخ اختیار کر سکتی ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1