Premium Content

Add

درہ خنجراب پر پاک چین سرحد کا عارضی طور پر کھولنا

Print Friendly, PDF & Email

تجارتی سرگرمیوں کے لیے درہ خنجراب پر پاک چین سرحد کا عارضی طور پر کھولنا ایک اہم اور مثبت پیشرفت کی نشاندہی کرتا ہے، جس سے دونوں ممالک کے درمیان گاڑیوں کی نقل و حمل ، ڈرائیوروں اور کارگو کو گزرنے کے لیے 14 دن کی ونڈو فراہم کی گئی ہے۔ یہ اقدام اقتصادی تعلقات کو فروغ دینے اور سرحد پار تجارت کو آسان بنانے کے لیے اہم ہے۔

یہ عارضی افتتاح نگراں وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان ہونے والی ملاقات کے بعد کیے گئے وعدے کے مطابق ہے، جہاں دونوں ممالک نے خنجراب پاس کو سال بھر فعال رکھنے پر اتفاق کیا۔ روایتی طور پر یہ پاس سردیوں کے دوران چار ماہ تک بند رہتا تھا جس سے دونوں ممالک کے درمیان تجارت میں رکاوٹ پیدا ہوتی تھی۔ اس عرصے کے دوران پاس کو عارضی طور پر کھولنے کا فیصلہ مشکل موسمی حالات میں بھی اقتصادی تعاون کو بڑھانے اور رابطے کو برقرار رکھنے کے عزم کو ظاہر کرتا ہے۔ پاکستان اور چین کے درمیان سرحدی پروٹوکول معاہدہ، جو اپریل اور نومبر کے درمیان تجارت اور سفر کی اجازت دیتا ہے، اس عارضی افتتاح کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔ یہ معاہدہ 1985 سے نافذ ہے، اور پاس کو سال بھر آپریشنل رکھنے کے حالیہ اقدام سے گلگت بلتستان اور چین کے سنکیانگ خطے کے درمیان اقتصادی تعلقات مزید مضبوط ہوئے ہیں۔ موسم سرما کے مہینوں میں تجارتی سرگرمیوں میں اضافے سے پیدا ہونے والے معاشی مواقع دونوں خطوں کی مقامی معیشتوں پر مثبت اثرات مرتب کر سکتے ہیں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

عارضی افتتاح کے پہلے دن ایک درجن چینی کنٹینرز، کچھ سامان لے جانے والے اور زیادہ تر برآمدی اشیاء لے جانے کے لیے خالی تھے، خنجراب پاس کے ذریعے سوست ڈرائی پورٹ پہنچے۔ سامان کی یہ آمد اس فیصلے کے فوری اثر کی نشاندہی کرتی ہے، جس سے دونوں ممالک کے درمیان تجارت کے ہموار بہاؤ کی اجازت ملتی ہے۔ امتیاز شگری، اسسٹنٹ کلکٹر کسٹمز، سوست نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ پاکستان کسٹم عارضی افتتاح کے دوران تجارتی سرگرمیوں میں سہولت فراہم کرے گا، درآمدی اور برآمد شدہ اشیاء کی کلیئرنس کے لیے کسٹم حکام پہلے سے سوست ڈرائی پورٹ پر تعینات ہیں۔ یہ واضح ہے کہ اس مدت کے دوران تجارتی کارروائیوں کی موثر ہینڈلنگ کو یقینی بنانے کے لیے ضروری انفراسٹرکچر اور ریگولیٹری اقدامات موجود ہیں۔

تجارتی سرگرمیوں کے لیے درہ خنجراب کو عارضی طور پر کھولنا نہ صرف سال بھر کے آپریشن کے عزم کے ساتھ مطابقت رکھتا ہے بلکہ موسمی چیلنجوں پر قابو پانے کے لیے دونوں ممالک کی لچک اور عزم کو بھی اجاگر کرتا ہے۔ یہ مثبت پیش رفت اقتصادی تعاون کو فروغ دینے، کاروبار کے لیے مواقع پیدا کرنے اور پاکستان اور چین کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ چونکہ اس 14 روزہ ونڈو کے دوران تجارتی سرگرمیاں پروان چڑھ رہی ہیں، یہ مستقبل کے تعاون کے لیے ایک مثبت مثال قائم کرتی ہے اور پاک چین اقتصادی راہداری کی اہمیت کو مزید تقویت دیتی ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1