Premium Content

Add

جنرل نشستوں پر خواتین کی نمائندگی

Print Friendly, PDF & Email

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے حال ہی میں سیاسی جماعتوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ اپنے امیدواروں کی فہرستیں پانچ دنوں کے اندر جمع کرائیں، جس سے جنرل نشستوں پر خواتین کی کم از کم پانچ فیصد نمائندگی کو یقینی بنایا جائے۔ یہ ہدایت، الیکشن ایکٹ، 2017 کے سیکشن 206 کے تحت دی گئی ہے، جو کہ انتخابی حرکیات میں ایک اہم جہت کا اضافہ کرتی ہے، جس کا مقصد جمہوری عمل میں صنفی شمولیت کو نافذ کرنا ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی ہدایت، جس کی بنیاد الیکشن ایکٹ میں ہے، پاکستان کے سیاسی منظر نامے میں خواتین کی تاریخی کم نمائندگی کو دور کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ اس قانون میں کہا گیا ہے کہ سیاسی جماعتیں عام نشستوں پر خواتین امیدواروں کی کم از کم پانچ فیصد نمائندگی کو یقینی بنائیں، جو سیاست میں صنفی تنوع کو بڑھانے کی عالمی کوششوں کے مطابق ہے۔ یہ قدم محض طریقہ کار نہیں ہے بلکہ انتخابی عمل میں شمولیت اور مساوات کو فروغ دینے کی طرف ایک اہم پیش رفت کی نمائندگی کرتا ہے۔ چونکہ سیاسی جماعتیں تعمیل کی پیچیدگیوں سے نبرد آزما ہوتی ہیں، انتخابی سیاست میں خواتین کی شرکت کو فروغ دینے کے لیے ان کے عزم پر روشنی ڈالی جاتی ہے۔ پالیسی سازی اور وسیع تر سماجی و سیاسی منظر نامے پر خواتین کے گہرے اثرات کے پیش نظر صنفی شمولیت پر یہ زور سب سے اہم ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

پی پی پی اور مسلم لیگ (ن) نے مینڈیٹ کوٹہ سے تجاوز کرنے کے لیے اپنے عزم کا اعادہ کیا ہے، پی پی پی نے خواتین امیدواروں کو 5 فیصد سے زائد نشستیں مختص کیں، اور حکمت عملی کے ساتھ انہیں ان حلقوں میں رکھا جہاں انتخابی کامیابی متوقع ہے۔ یہ فعال نقطہ نظر نہ صرف الیکشن کمیشن کی ہدایت کے مطابق ہے بلکہ پارٹیوں کے اس اہم کردار کے اعتراف کو بھی اجاگر کرتا ہے جو خواتین اہم حلقوں میں کامیابی حاصل کرنے میں ادا کر سکتی ہیں۔ مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر عرفان صدیقی نے اس جذبات کی بازگشت کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ خواتین کی شمولیت کے لیے پارٹی کا عزم پانچ فیصد سے زیادہ ہے۔ انہوں نے انتخابی سیاست میں خواتین کے کردار کو بڑھانے پر مسلم لیگ ن کی چیف آرگنائزر مریم نواز کی توجہ کو اجاگر کیا۔

ای سی پی کی ہدایت، تعمیل کی فوری ضرورت پر توجہ دیتے ہوئے، سیاست میں خواتین کی نمائندگی کو مضبوط بنانے کے لیے وسیع تر کوششوں کی عکاسی کرتی ہے۔ صنفی شمولیت کو نافذ کرکے، ای سی پی مزید متنوع اور نمائندہ سیاسی منظر نامے میں حصہ ڈال رہا ہے۔ یہ فعال اقدام عالمی بہترین طریقوں سے ہم آہنگ ہے اور یہ واضح پیغام دیتا ہے کہ پاکستان صنفی رکاوٹوں کو توڑنے اور اپنے جمہوری سفر میں شمولیت کو فروغ دینے کے لیے پرعزم ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1