Premium Content

Add

ہائیڈرو پاور تنازعہ

Print Friendly, PDF & Email

گلگت بلتستان میں 20 میگاواٹ ہائیڈرو پاور پراجیکٹ کی 40 میگاواٹ تک توسیع کے بارے میں حالیہ ہنگامہ آرائی شفاف اور جوابدہ فیصلہ سازی کے عمل کی ملک میں توانائی کی ترقی جیسے اہم معاملات میں اشد ضرورت کا مظہر ہے۔ بجلی کی شدید قلت سے دوچار خطہ میں، داؤ زیادہ نہیں ہو سکتا، پھر بھی جس انداز میں یہ منصوبہ سامنے آیا ہے اس سے گورننس اور ریگولیٹری نگرانی پر سنگین سوالات اٹھتے ہیں۔

پراجیکٹ کی بڑھتی ہوئی لاگت اور مناسب منظوریوں کی عدم موجودگی کے درمیان، یہ واضح ہے کہ اس کوشش میں کچھ سنگین غلطی ہوئی ہے۔ یہ لا جواب ہے کہ ہم متعلقہ حکام کی جانب سے ضروری گرین لائٹ کے بغیر کسی پروجیکٹ کی صلاحیت کو دوگنا کرنے کا جواز کیسے بنا سکتے ہیں۔ شفاف بولی کے عمل کی کمی آگ میں صرف ایندھن کا اضافہ کرتی ہے، جو ریگولیٹری اصولوں اور طریقہ کار کی سالمیت کی صریح نظر اندازی کا اشارہ دیتی ہے۔ ہم اس طرح کی کھلم کھلا خلاف ورزیوں پر آنکھیں بند نہیں کر سکتے، خاص طور پر جب وہ خطے کی ترقی کے لیے ضروری بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کے بارے میں فکر مند ہوں۔

گلگت بلتستان کی ہائیڈرو پاور کی صلاحیت ناقابل تردید ہے، لیکن صرف صلاحیت ہی کافی نہیں ہے۔ اس صلاحیت کو مؤثر طریقے سے بروئے کار لانے کے لیے ہمیں مضبوط گورننس میکانزم کے ساتھ ٹھوس کارروائی کی ضرورت ہے۔ خطے کا توانائی کا شعبہ، جو اس وقت الگ تھلگ مائیکرو اور چھوٹے پن بجلی گھروں پر انحصار کرتا ہے، جامع اصلاحات کے لیے پکار رہا ہے۔ یہ اصلاحات اپنے طور پر نہیں ہو سکتی، کیونکہ اس کے لیے ہر قدم پر شفاف اور جوابدہ طرز حکمرانی کے طریقوں کی پابندی ضروری ہے۔

ایک وقف انرجی ریگولیٹری اتھارٹی اور ڈویلپمنٹ آرگنائزیشن کا قیام درست سمت میں ایک قدم ہے۔ تاہم، ہونٹوں کی خدمت کافی نہیں ہوگی۔ ہمیں ریگولیٹری خودمختاری اور شفافیت کو یقینی بنانے کے لیے ٹھوس اقدامات کی ضرورت ہے، جس کا آغاز پراجیکٹ کے نفاذ کی سخت نگرانی سے ہوتا ہے۔ قانون سازی کے لیے پیش کیے گئے ڈرافٹ ایکٹ کو بیوروکریٹک ڈیسک پر دھول نہیں اکھٹی کرنی چاہیے۔ پائیدار توانائی کی ترقی کے لیے ضروری ریگولیٹری فریم ورک فراہم کرنے کے لیے انہیں تیزی سے نافذ کیا جانا چاہیے۔

آخر میں، ہمیں مقامی کمیونٹی کی آوازوں کو نہیں بھولنا چاہیے، جن کے خدشات نوکر شاہی کے جھگڑوں میں ڈوب چکے ہیں۔ گائیڈ لائن کی خلاف ورزیوں اور مشاورت کی کمی کے حوالے سے ان کی شکایات کو فوری طور پر دور کیا جانا چاہیے۔ آخرکار، یہ ان کی زندگی اور ذریعہ معاش ہے جو توازن میں لٹکی ہوئی ہے۔ ہم ان کے مرہون منت ہیں کہ وہ اپنے مفادات کو سب سے بڑھ کر ترجیح دیں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ توانائی کے یہ منصوبے وسیع تر علاقائی ترقی کو فروغ دیتے ہوئے ان کی ضروریات کو پورا کریں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1