Premium Content

Add

موٹروے کا بحران

Print Friendly, PDF & Email

نگران حکومت کی جانب سے حیدرآباد سکھر (ایم-6) موٹر وے منصوبے کے معاہدے کی حالیہ منسوخی خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کے منصوبوں کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے۔ یہ اقدام نہ صرف 306 کلومیٹر موٹر وے کی ترقی کو خطرے میں ڈالتا ہے بلکہ منصوبے کی لاگت میں 100 فیصد سے زیادہ اضافہ کرتا ہے، جس سے قومی بجٹ پر دباؤ پڑتا ہے۔

ختم شدہ معاہدے میں ٹیک نو، اے سی سی اور سی ایم سی کا مشترکہ منصوبہ شامل تھا، جس نے اس منصوبے میں 300 ارب روپے سے زیادہ کی سرمایہ کاری کی۔ انہوں نے نیشنل ہائی وے اتھارٹی سے صرف 9.5 بلین روپے وائی بلٹی گیپ فنڈنگ ​​(وی جی ایف) مانگے۔ حیرت انگیز طور پر، ختم ہونے کے بعد، این ایچ اے نے خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کو وی جی ایف کو چھوڑ کر 400 بلین روپے کے نظرثانی شدہ لاگت کا تخمینہ پیش کیا، جس سے ممکنہ طور پر منصوبے کی کل لاگت 700 بلین روپے تک پہنچ گئی۔ یہ فیصلہ پراجیکٹ کی لاگت میں نمایاں اضافے کے بارے میں خدشات کو جنم دیتا ہے، جس سے قومی بجٹ کو ممکنہ نقصان کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ اس فیصلے نے لاگت میں اضافے کی وجہ سے قومی بجٹ کو 300-400 ارب روپے سے زائد کے ممکنہ نقصان کے خدشات کو جنم دیا ہے۔ منصوبے کی لاگت 700 بلین روپے تک مقرر ہے، جس میں این ایچ اے تقریباً 300 بلین روپے کا وی جی ایف حصہ فراہم کرے گا۔ قومی بجٹ پر اتنا  مالی بوجھ ہمارے ملک کی معیشت پر اس فیصلے کے اثرات کے تنقیدی جائزہ کا مطالبہ کرتا ہے۔

مقامی سرمایہ کار کی جانب سے 300 ارب روپے سے زائد کی سرمایہ کاری کو اچانک روکنا نہ صرف ترقی کو روکتا ہے بلکہ سرمایہ کاروں کے اعتماد کو بھی مجروح کرتا ہے۔ ملک کی نازک معاشی صورتحال میں ایم-6منصوبے کے لیے 700 ارب روپے کی مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرنا ایک مشکل کام بن جاتا ہے۔ یہ دھچکا نہ صرف خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کی کوششوں کو خطرے میں ڈالتا ہے بلکہ بنیادی ڈھانچے کے اہم منصوبوں میں سرمایہ کاروں کے اعتماد کو آسان بنانے اور اسے برقرار رکھنے کی حکومت کی صلاحیت پر بھی سوال اٹھاتا ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

آگے بڑھتے ہوئے، نیشنل ہائی وے اتھارٹی کی نئی بولیاں طلب کرنے اور منصوبے کے تسلسل کے لیے انتظامات کرنے کا عزم ضروری ہے۔ تاہم، بولی لگانے کے عمل میں شفافیت اور منصفانہ پن کو یقینی بناتے ہوئے، جوائنٹ وینچر کو ختم کر کے اٹھائے گئے خدشات کو دور کرنا ضروری ہے۔ حکومت کو انفراسٹرکچر کے منصوبوں میں نجی سرمایہ کاری کے لیے سازگار ماحول کو فروغ دے کر سرمایہ کاروں کا اعتماد بحال کرنے کے لیے فعال اقدامات کرنے چاہئیں۔

حکومت کو موٹروے کے اس اہم منصوبے کی کامیابی اور بروقت تکمیل کے لیے شفافیت، انصاف پسندی اور سرمایہ کاروں کے اعتماد کو ترجیح دیتے ہوئے اس صورتحال کو احتیاط سے جانا چاہیے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1