Premium Content

Add

نئے وزیراعظم کو درپیش چیلنجز

Print Friendly, PDF & Email

نئے وزیراعظم نےکرسی سنبھال لی ہے۔ انہیں جلد از جلد پاکستان کو پرسکون پانیوں کی طرف لے جانا چاہیے۔ ایک انتہائی متنازعہ  انتخابات کے بعد، ایسا لگتا ہے کہ اپوزیشن انہیں اپنی نشست پر آرام سے بیٹھنے دینے کے موڈ میں نہیں ہے۔

اُن کو ہر اس قانون سازی پر سخت مقابلےکی توقع کر نی چاہیے جو ان کی حکومت اسمبلی میں لائے گی۔ درحقیقت، پی ٹی آئی سے وابستہ کچھ قانون سازوں نے واضح کر دیا ہے کہ وہ اسے کام کرنے کی اجازت دینے کا ارادہ نہیں رکھتے۔

قطع نظر، وزیر اعظم خود کو اُلجھن میں ڈالنے کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ یہ ان کی ذمہ داری ہے کہ وہ سیاسی خلاء کو ختم کرے اور قوم کے اندر اتحاد کا احساس بحال کرے کیونکہ وہ تاریخی سماجی اور معاشی بحرانوں سے نمٹنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ بلا شبہ ملک کو آگے لے جانے کے لیے بے پناہ ہمت اور بڑے دل کی ضرورت ہوگی۔

چونکہ شہباز شریف نے قیادت کا انتخاب کیا ہے اس لیے انہیں یہ ثابت کرنا چاہیے کہ ان کی دوسری مدت پہلی سے بہتر ہوگی۔ انہیں اہل افراد پر مشتمل کابینہ کا تقرر کرنا چاہیے ، جس کا انتخاب شریف قبیلے سے ان کی قربت کی وجہ سے نہیں ، بلکہ اس لیے کیا جائے کہ وہ ان کے حوالے کردہ محکموں کو سنبھالنے کے لیے کتنے موزوں ہیں

یہ وقت وزارتوں اور اہم دفاتر کو سیاسی احسانات کی ادائیگی کے طور پر الگ کرنے کا نہیں ہے ۔ پی ڈی ایم حکومت نے اس بارے میں کافی سبق پیش کیے کہ بحران کے دور میں اسے دہرانا ایک بری غلطی کیوں ہوگی ۔

اس بات پر غور کرتے ہوئے کہ مسٹر شریف کے لیے ‘ڈیلیور’ کرنے کا دوسرا موقع حاصل کرنے کے لیے کتنا کچھ داؤ پر لگا دیا گیا ہے ، انہیں بڑی احتیاط کے ساتھ غور کرنا چاہیے کہ انہیں ان کی حکومت سے متوقع نتائج کون حاصل کرے گا ۔ اسے یاد رکھنا چاہیے کہ اس کی حکومت ایک سخت رسی پر چل رہی ہوگی: پالیسی کی الجھن جلد ہی قومی تباہی میں تبدیل ہو سکتی ہے ۔ پی ڈی ایم کی آخری وزارت خزانہ اس کی ایک مثال تھی۔

ان کی دوسری بڑی ذمہ داری یہ ہوگی کہ وہ پاکستان کے فوری سیاسی مستقبل کے نقشے کو تشکیل دینا شروع کریں تاکہ ملک اپنے سماجی سیاسی نظام کی تلخی سے نکل کر آگے بڑھنا شروع کر سکے جس نے 8 اپریل 2022 اور 3 مارچ 2024 کے درمیان وقفہ کو نشان زد کیا تھا۔

اس کے لیے مسلم لیگ (ن) اور اس کی اتحادی جماعتوں کو سب سے پہلے پی ٹی آئی کو مزید نشانہ بنانے کے کسی بھی منصوبے کو فوری طور پر ختم کرنے اور اس کی قیادت اور اس کے حامیوں کے ساتھ مفاہمت کا عمل شروع کرنے کی ضرورت ہوگی چاہے اس کا مطلب پہلا قدم اُٹھانامشکل ہی کیوں نہ ہو۔ یہ تبصرہ باربارکیا گیا ہے کہ حالیہ انتخابات میں پاکستان کے عوام نے پی ڈی ایم اتحاد اور اس کے حامیوں کے خلاف ووٹ دیا۔

اس کو نظر انداز کرتے رہنا ایک سنگین غلطی ہوگی کیونکہ نئے وزیر اعظم قوم کو آگے لے جانے کی کوشش کر رہا ہے۔ مسٹر شریف کو بہت ہمت دکھانے کی ضرورت ہو گی اگر وہ چاہتے ہیں کہ انہیں اچھی طرح سے یاد رکھا جائے ۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1