Premium Content

Add

پاکستان میں اچھی حکمرانی کو یقینی بنانا: ایک کثیر جہتی نقطہ نظر

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: مبشر ندیم

گڈ گورننس کا تصور ایک متنوع اصولوں اور طریقوں پر مشتمل ہے جس کا مقصد ایک منصفانہ، موثر اور جامع معاشرہ تشکیل دینا ہے۔ تاہم، اس مثالی ریاست کا حصول پیچیدہ ہے اور اس کے لیے سیاسی حکومتوں سے کثیر جہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔ حکومتیں کس طرح اچھی حکمرانی کو یقینی بنا سکتی ہیں اس بارے میں مختلف نقطہ نظروں کی تفصیل مندرجہ ذیل ہے:۔

قانون کی حکمرانی اور احتساب

فاؤنڈیشن فار فیئرنس: قانون کی ایک مضبوط حکمرانی، جہاں ہر کوئی یکساں قوانین کے تابع ہے، چاہے ان کی حیثیت کچھ بھی ہو، اچھی حکمرانی کی بنیاد بناتی ہے۔ یہ انصاف پسندی، پیشین گوئی کو یقینی بناتا ہے، اور شہریوں کو من مانی کارروائیوں سے بچاتا ہے۔

اقتدار کو جوابدہ رکھنا: احتساب کے لیے مضبوط طریقہ کار، بشمول ایک آزاد عدلیہ، مقننہ اور میڈیا، اہم ہیں۔ یہ ادارے اقتدار کی چھان بین کرتے ہیں، غلط کاموں کو بے نقاب کرتے ہیں، اوراس بات کویقینی بناتے ہیں کہ منتخب عہدیدار عوام کو جواب دہ ہیں۔

شفافیت اور شرکت

کھلا پن اور اعتماد: شفافیت، معلومات تک کھلی رسائی اور حکومت کی طرف سے واضح، بروقت مواصلت کے ذریعے، اعتماد کو فروغ دیتی ہے اور شہریوں کو فیصلہ سازی کے عمل میں شامل ہونے کا اختیار دیتی ہے۔

شہریوں کی شرکت: عوامی مشاورت، شراکتی بجٹ، اور دیگر میکانزم کے ذریعے پالیسی سازی میں شہریوں کی شمولیت کے مواقع پیدا کرنا اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ متنوع آوازیں سنی جائیں اور جوابدہ حکمرانی میں تعاون کیا جائے۔

تاثیر اور افادیت

نتائج کی فراہمی: گڈ گورننس کا ترجمہ ضروری خدمات کو موثر طریقے سے فراہم کرنا ہے۔ اس میں اچھی طرح سے منظم عوامی ادارے، قابل انسانی وسائل، اور ثبوت اور ضرورت کی بنیاد پر وسائل کی تقسیم کو ترجیح دینا شامل ہے۔

بدعنوانی سے لڑنا: بدعنوانی اچھی حکمرانی کے تمام پہلوؤں کو نقصان پہنچاتی ہے۔ انسداد بدعنوانی کے اقدامات، بشمول مضبوط قانونی ڈھانچہ، موثر نفاذ کے طریقہ کار، اور عوامی بیداری کی مہم، اعتماد پیدا کرنے اور وسائل کو ان کے مطلوبہ مستفید افراد تک پہنچنے کو یقینی بنانے کے لیے ضروری ہیں۔

مساوات اور انسانی حقوق

شمولیت اور مساوات: گڈ گورننس تمام شہریوں کے پس منظر یا شناخت سے قطع نظر ان کے حقوق اور وقار کو برقرار رکھتی ہے۔ یہ مواقع، خدمات اور انصاف تک مساوی رسائی کو فروغ دیتا ہے، عدم مساوات کو دور کرتا ہے اور کمزوروں کی حفاظت کرتا ہے۔

پائیدار ترقی: پائیدار ترقی، موجودہ اور آنے والی نسلوں کے لیے معاشی، سماجی اور ماحولیاتی ضروریات کو متوازن کرنا، اچھی حکمرانی کا ایک اہم پہلو ہے۔ حکومتوں کو اپنے اقدامات کے طویل مدتی مضمرات پر غور کرنا چاہیے اور ماحولیاتی بہبود کو فروغ دینے والی پالیسیوں کو ترجیح دینا چاہیے۔

چیلنجز اور ٹریڈ آف

مفادات کا توازن: مسابقتی مفادات، جیسے انفرادی آزادیوں اور قومی سلامتی، اقتصادی ترقی اور ماحولیاتی تحفظ کے درمیان توازن قائم کرنا ایک مستقل چیلنج ہے۔ جمہوری عمل اور کھلے مکالمے کے ذریعے مشترکہ بنیاد تلاش کرنا بہت ضروری ہے۔

ثقافتی سیاق و سباق: حکمرانی کے طریقوں کو ہر ملک کے مخصوص ثقافتی، تاریخی اور سیاسی تناظر کے مطابق بنانے کی ضرورت ہے۔

حکومت سے بالاتر

سول سوسائٹی کا کردار: ایک متحرک اور بااختیار سول سوسائٹی حکومتوں کو جوابدہ بنانے، اصلاحات کی وکالت کرنے اور شہریوں کی شرکت کو فروغ دینے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔

بین الاقوامی تعاون: ممالک کے درمیان تعاون اور علم کا تبادلہ اچھی حکمرانی کی طرف پیش رفت کو تیز کر سکتا ہے۔ بین الاقوامی معیارات اور فریم ورک رہنمائی اور مدد فراہم کر سکتے ہیں۔

اچھی حکمرانی کو یقینی بنانا ایک مسلسل سفر ہے، منزل نہیں۔ اس کے لیے سیاسی حکومتوں کی مسلسل کوشش، جمہوری اصولوں سے وابستگی، اور شہریوں اور سول سوسائٹی کی فعال شمولیت کی ضرورت ہے۔ صرف ایک جامع نقطہ نظر کے ذریعے جو متنوع نقطہ نظر اور چیلنجوں کو حل کرتا ہے ہم سب کے لیے ایک زیادہ منصفانہ، مساوی، اور پائیدار مستقبل کی تعمیر کی کوشش کر سکتے ہیں۔ اچھی حکمرانی کا حصول ایک مسلسل کوشش ہے، جس میں کثیر جہتی نقطہ نظر کا مطالبہ کیا جاتا ہے جو متنوع نقطہ نظر کو اپناتا ہے، شرکت کو فروغ دیتا ہے، اخلاقی اصولوں کو برقرار رکھتا ہے، اور ارتقا پذیر حقائق کے مطابق ڈھالتا ہے۔ گڈ گورننس کی کثیر جہتی نوعیت کو تسلیم کرتے ہوئے اور اس کے نظریات کے لیے باہمی تعاون کے ساتھ کام کرنے سے، سیاسی حکومتیں زیادہ منصفانہ، اور خوشحال معاشرے کی راہ ہموار کر سکتی ہیں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1