Premium Content

Add

پاکستان کے حالیہ انتخابات اور معاشی چیلنجز

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: دانیال احمد

پاکستان کے حالیہ انتخابات نے قوم کو معاشی بحران کے دہانے پر چھوڑ دیا ہے۔ غیر فیصلہ کن نتیجہ، جس میں کوئی واضح فاتح نہیں اور پارلیمنٹ بکھری ہوئی ہے، بین الاقوامی مالیاتی فنڈ سے ایک اہم نئے بیل آؤٹ پروگرام کو حاصل کرنے کی ملک کی صلاحیت پر ایک طویل سایہ ڈالتی ہے۔ یہ پروگرام، جو مارچ 2024 میں ختم ہونے والا ہے، قرضوں، مہنگائی اور جمود کا شکار نمو کے بوجھ تلے دبے پاکستان کی جدوجہد کرنے والی معیشت کے لیے ایک لائف لائن کا کام کرتا ہے۔

آٹھ فروری کے انتخابات میں سابق وزیر اعظم عمران خان کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار اسمبلی میں سب سے بڑے گروپ کے طور پر سامنے آئے۔ تاہم، اکثریت کی عدم موجودگی نے سیاسی تعطل پیدا کر دیا ہے، جو ایک مستحکم حکومت کی تشکیل میں رکاوٹ ہے۔ یہ غیر یقینی صورتحال آئی ایم ایف کے درمیان ہچکچاہٹ کو جنم دیتی ہے، جو روایتی طور پر ایک واضح اور متحد قیادت کے ساتھ کام کرنے کی حامی ہے جو سخت معاشی اصلاحات کو نافذ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

تاخیر کے نتائج سنگین ہیں۔ ایک طویل مذاکراتی عمل یا نئے آئی ایم ایف پروگرام کو محفوظ بنانے میں ناکامی، منفی نتائج کے جھڑپ کو متحرک کر سکتی ہے۔ سب سے پہلے، پاکستان کی بیرونی لیکویڈیٹی کا دباؤ آسمان کو چھو سکتا ہے، جس سے اس کی غیر ملکی کرنسی کی ذمہ داریوں کو پورا کرنا مشکل ہو سکتا ہے اور ڈیفالٹ کا خدشہ بڑھ سکتا ہے۔ دوم، آئی ایم ایف کی حمایت کے بغیر، موجودہ قرضوں پر ڈیفالٹ کا خطرہ بڑھ جاتا ہے، جس سے پاکستان کی پہلے سے کمزور ساکھ کو مزید نقصان پہنچتا ہے۔ سوم، مالی امداد کے دیگر ممکنہ ذرائع، جیسے کہ دو طرفہ اور کثیر جہتی شراکت دار، سیاسی طور پر غیر مستحکم ماحول سے کنارہ کشی اختیار کر سکتے ہیں۔ آخر میں، طویل مدتی استحکام کے لیے ضروری اہم اقتصادی اصلاحات کو نظر انداز کیا جا سکتا ہے، جو پاکستان کی معاشی پریشانیوں کو مزید گھیر لے گی۔

دو منظرنامے اپنے آپ کو پیش کرتے ہیں۔ بہترین صورت حال میں، ایک مستحکم حکومت تیزی سے شکل اختیار کر لیتی ہے اور آئی ایم ایف کے ساتھ تعمیری انداز میں مشغول ہو جاتی ہے۔ یہ تیز تر کارروائی چند مہینوں کے اندر ایک نئے پروگرام کی راہ ہموار کر سکتی ہے، جو بدترین صورت حال کے معاشی نتائج کو روک سکتی ہے۔ تاہم، موجودہ تعطل ایک اور بھی بدصورت منظر نامے کا خدشہ پیدا کرتا ہے۔ طویل مذاکرات اور سیاسی عدم استحکام معاشی بحران کو بڑھا سکتا ہے، ممکنہ طور پر سماجی بدامنی کا باعث بن سکتا ہے اور پاکستان کے مستقبل کو مزید خطرے میں ڈال سکتا ہے۔

آنے والے ہفتے پاکستان کی سیاسی قیادت کے لیے ایک اہم امتحان ہوں گے۔ موجودہ بحران پر قابو پانا اور آئی ایم ایف کے سامنے متحدہ محاذ کا مظاہرہ کرنا صرف ایک سیاسی ضرورت نہیں بلکہ ایک معاشی ضرورت ہے۔ قوم کا نازک مستقبل توازن میں لٹکا ہوا ہے۔ قوم اپنے لیڈروں کے قدم اٹھانے اور تقسیم کو ختم کرنے کا انتظار کر رہی ہے، نہ صرف سیاسی استحکام کے لیے، بلکہ اپنی جدوجہد کرتی ہوئی معیشت کی بقا کے لیے۔ آخر میں، پاکستان کے غیر فیصلہ کن انتخابات نے ملک کے معاشی مستقبل کو مشکل میں ڈال دیاہے۔ آنے والے ہفتے نہ صرف ایک مستحکم حکومت کی تشکیل کا تعین کرنے کے لیے، بلکہ آئی ایم ایف کے نئے پروگرام کو حاصل کرنے کے لیے بھی اہم ہوں گے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1