Premium Content

Add

پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: مہرین گل

پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق ایک پیچیدہ اور متنازعہ موضوع ہے۔ پاکستان کا آئین اور اسلام کی تعلیمات اقلیتوں کے انسانی حقوق کی ضمانت دیتے ہیں، بشمول مذہب، اظہار رائے اور انجمن کی آزادی۔ تاہم، عملی طور پر، اقلیتوں کو معاشرے کے بعض طبقات اور حکومت کی طرف سے مختلف قسم کے امتیازی سلوک، تشدد اور ظلم و ستم کا سامنا ہے۔ حکام اکثر مناسب تحفظ فراہم کرنے یا مجرموں کو جوابدہ ٹھہرانے میں ناکام رہتے ہیں۔ پاکستان میں اقلیتوں کی صورت حال ان تاریخی، سیاسی اور سماجی عوامل سے متاثر ہوئی ہے جنہوں نے ملک کے تشخص اور نظریے کو تشکیل دیا ہے۔

پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق کے لیے ایک بڑا چیلنج قانونی ڈھانچہ ہے جو اس بات کی وضاحت کرتا ہے کہ کون اقلیت ہے اور ان کے کیا حقوق ہیں۔ پاکستان کے آئین کے مطابق یہاں صرف مذہبی اقلیتیں ہیں اور کوئی نسلی، لسانی یا مقامی اقلیتیں نہیں ہیں۔ حالیہ مردم شماری کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ مذہبی اقلیتیں آبادی کا تقریباً 3.7 فیصد ہیں، جن میں عیسائی، ہندو، احمدی، سکھ، پارسی، بدھ مت اور دیگر شامل ہیں۔ تاہم، کچھ گروہ، جیسے احمدی، آئین کے ذریعے غیر مسلم قرار دیے گئے ہیں۔ مذہبی اقلیتیں، جیسے عیسائی اور ہندو، اور دیگر کو امتیازی سلوک اور تشدد کا سامنا کرنا پڑتا ہے، خاص طور پر سماجی طریقوں اور قوانین کے تحت، جن کا اکثر انہیں نشانہ بنانے کے لیے غلط استعمال کیا جاتا ہے۔

پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق کے لیے ایک اور چیلنج سماجی اور ثقافتی تناظر ہے جو عدم برداشت اور انتہا پسندی کو فروغ دیتا ہے۔ پاکستان نے فرقہ وارانہ تشدد، دہشت گردانہ حملوں، اور اقلیتوں کے خلاف ہجوم کے تشدد کے کئی واقعات دیکھے ہیں۔ مثال کے طور پر، 2020 میں، مندر کی توسیع پر تنازعہ کے بعد صوبہ خیبر پختونخواہ کے ضلع کرک میں ایک ہندو مندر میں توڑ پھوڑ کی گئی اور اسے آگ لگا دی گئی ۔ اس طرح کےواقعات پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق اور وقار کے احترام اور تحفظ کی کمی اور نفرت اور تشدد کو فروغ دینے والے انتہا پسندانہ نظریات کے اثر کو ظاہر کرتے ہیں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

تاہم، ان چیلنجوں کے باوجود، کچھ مثبت پیش رفت اور اقدامات بھی ہیں جن کا مقصد پاکستان میں اقلیتوں کی صورتحال کو بہتر بنانا ہے۔ پاکستان کا آئین اقلیتوں کے حقوق کے لیے کچھ تحفظات اور ضمانتیں فراہم کرتا ہے، جیسے کہ پارلیمنٹ اور صوبائی اسمبلیوں میں اقلیتوں کی نمائندگی، اقلیتوں کے لیے قومی کمیشن کا قیام، اور اقلیتوں کے لیےسرکاری نوکریوں اور تعلیمی اداروں میں 5 فیصد کوٹہ فراہم کرنا ۔ حکومت نے اقلیتوں کی شکایات اور مطالبات کو دور کرنے کے لیے کچھ اقدامات بھی کیے ہیں، جیسے کہ اقلیتوں کی عبادت گاہوں کی بحالی اور تزئین و آرائش، اقلیتوں کے تہواروں کے لیے عام تعطیل کا اعلان، سکھ میرج ایکٹ کو تسلیم کرنا، اور شناخت کا اجرا۔

مزید برآں، سول سوسائٹی گروپس، انسانی حقوق کے کارکن، وکلاء، صحافی، اور اقلیتی رہنما اقلیتوں کے حقوق کی وکالت اور مہم چلا رہے ہیں، بیداری بڑھا رہے ہیں، قانونی امداد فراہم کر رہے ہیں، اور امتیازی قوانین اور طریقوں کو چیلنج کر رہے ہیں۔ ایسی کوششوں کی کچھ مثالیں سٹیزن فار ڈیموکریسی ہیں، سول سوسائٹی کی تنظیموں کا اتحاد جو قوانین میں اصلاحات کے لیے کام کرتا ہے۔ ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان، ایک آزاد نگران ادارہ جو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر نظر رکھتا ہے اور رپورٹ کرتا ہے۔ اور سیسل اینڈ آئرس چوہدری فاؤنڈیشن، ایک غیر سرکاری تنظیم جو اقلیتی بچوں اور خواتین کو تعلیم اور بااختیار بنانے کی سہولت فراہم کرتی ہے۔

آخر میں، پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق ایک تشویش اور بحث کا موضوع ہیں، کیونکہ اقلیتوں کو اپنے انسانی حقوق کے لیے مختلف چیلنجز اور خطرات کا سامنا ہے لیکن ان کے پاس انصاف اور مساوات کے حصول کے لیے کچھ مواقع اور راستے بھی ہیں۔ پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق نہ صرف ایک قانونی اور آئینی مسئلہ ہے بلکہ یہ ایک اخلاقی مسئلہ ہے جس کے لیے حکومت، عدلیہ، میڈیا، سول سوسائٹی اور اکثریتی برادری سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کے عزم اور تعاون کی ضرورت ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1