Exclusive Content

Add

پاکستان میں عوامی پالیسی کا نفاذ

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: بیرسٹر رومان اعوان

ریاست عوام کی عمومی مرضی ہوتی ہے۔ اس طرح، عوامی زندگی ریاست اور معاشرے کے معاملات کے لیے اہم ہے۔ عوامی مفاد کو یقینی بنانے کے لیے عوامی قانون زمین کا سب سے بڑا قانون ہے۔ مفاد عامہ تمام عوامی قانون سازی، تفویض کردہ قانون سازی، قواعد، ضوابط، پالیسیوں اور رہنما خطوط کو چلاتا ہے۔ پھر، عوامی پالیسی کو  عوامی مفاد کے لیے  نافذ کرنے بہت اہم ہے۔ پاکستان جیسے ضابطہ کار معاشروں میں، آئین، قانون سازی اور تفویض کردہ قانون سازی کے ساتھ ہم آہنگ کر کے پالیسیاں بنانا بہت ضروری ہے کیونکہ آرٹیکل 199 عدالتوں کوانتظامی جائزہ لینے کا اختیار دیتا ہے۔

عوامی پالیسی عوامی مفادات کے لیے رہنما خطوط، نقطہ نظر، طریقہ کار اور حکمت عملی کا مجموعہ ہے۔ عوامی پالیسی انتظامی قانون سازی ہے، اس طرح کوئی بنیادی قانون سازی نہیں۔ اس لیے اس کو  قانون سازی اور آئین کے اصولوں کے مطابق ہونا چاہیے۔ قانونی پالیسی کا مسودہ تیار کرنے کی بنیادی ذمہ داری قانونی صف بندی کے نفاذ کو یقینی بنانا ہے۔ پاکستان میں زیادہ تر عوامی پالیسیاں ناکام ہو جاتی ہیں کیونکہ انہیں قانونی صف بندی کی ضرورت ہوتی ہے۔ آئین کے آرٹیکل 99 اور 139 وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو آئینی اختیار فراہم کرتے ہیں کہ وہ قوانین وضع کریں اور اس طرح عوامی تنظیموں کے مقاصد کے مطابق پالیسیاں تیار کریں۔ مزید برآں، قانون سازی پالیسیوں کے مسودے کے لیے بنیادی قانونی قوت ہے۔

عوامی پالیسیاں ریاست اور معاشرے کی سماجی، ثقافتی، انتظامی، اقتصادی اور مالیاتی ترقی کے لیے اہم ہیں۔ عوامی پالیسی عوامی تنظیم کے مقاصد کو پورا کرنے کے لیے سب سے زیادہ لچکدار قانونی عمل ہے۔ چونکہ اس میں عوامی اور اجتماعی مفاد شامل ہے، اس لیے اسے بڑے پیمانے پر عوامی مفاد کو ملحوظ خاطر رکھنا چاہیے۔ عوامی پالیسی سے فائدہ حاصل کرنے کےلیے اس کےمقاصد بہت ضروری ہیں۔ پالیسی کا واضح مقصد پالیسی کی ترتیب کے لیے اہم ہے۔ مقاصد کی وضاحت بہت ضروری ہے۔

پالیسی کی تشکیل قدرے آسان ہے، کیونکہ عوامی تنظیمیں اسے بنانے کے لیے پیشہ ور افراد کی خدمات حاصل کرتی ہیں۔ لہذا، عوامی اور نجی پیشہ ور افراد عام طور پر قانونی، تکنیکی اور انتظامی پہلوؤں پر محیط عوامی پالیسی تیار کر سکتے ہیں۔ تاہم، سیاسی اور بیوروکریٹک مفاد سب سے وسیع عوامی پالیسی چیلنج ہے۔اکژاوقات سیاسی اور افسر شاہی مفادات عوامی مفادات پر سبقت لے جاتے ہیں۔ پاکستان کے پاس شاید ہی کوئی ایسی عوامی پالیسی ہے جو بنیادی طور پر عوامی مفادات کو مدنظر رکھتی ہو۔ لہذا، عوامی تنظیموں کو عوام کے وسیع تر مفاد میں عوامی پالیسیاں مرتب کرنی چاہئیں۔

تاہم اصل مسئلہ عوامی پالیسیوں کے نفاذ کا ہے۔ پاکستان میں سیاسی حکمرانی ہے۔ لہذا، پالیسیوں، رہنما خطوط اور ضوابط کو نافذ کرنے میں سیاسی مستقل مزاجی کا ہونا بہت ضروری ہے۔ سیاسی مفادات کو عوامی پالیسیوں کے نفاذ میں عوامی مفادات سے سمجھوتہ نہیں کرنا چاہیے۔ پھر عوامی پالیسی کے نفاذ میں دوسرا بنیادی مسئلہ عوامی تنظیموں کی صلاحیت کا بحران ہے۔ یہ صلاحیت کا بحران دو بنیادی عناصر پر مشتمل ہے: تنظیمی اور انسانی وسائل کا بحران۔ عوامی تنظیموں کا ڈھانچہ قدامت پسند ہے اور دنیا بھر میں جدید عوامی تنظیموں کے تکنیکی ڈھانچے کی ضرورت کو پورا نہیں کرتا ہے۔ ٹیکنالوجی، بلکہ اعلیٰ ٹیکنالوجی، پاکستان میں عوامی تنظیموں کے لیے آگے بڑھنے کا راستہ ہے۔ عوامی تنظیموں کی انتظامی تبدیلی پاکستان میں عوامی پالیسی کے فریم ورک کے بہتر نفاذ کو یقینی بنائے گی۔ اس لیے پاکستان میں عوامی تنظیموں کی فعالیت کے لیے انتظامی اصلاحات بہت اہم ہیں۔

دوسری بنیادی صلاحیت عوامی انسانی وسائل کی صلاحیت کو بڑھانا ہے۔ جنرل کیڈر سروسز خصوصی عوامی تنظیموں کو چلانے سے قاصر ہیں۔ لہذا، عوامی تنظیموں کو خصوصی افعال چلانے کے لیے خصوصی منتظمین کی ضرورت ہوتی ہے۔ خصوصی منتظمین خدمات کی فراہمی کو بہتر  اور تنظیمی خود مختاری کو یقینی بنانے کے لیے بہت ضروری ہے۔ پھر عوامی پالیسی کو نافذ کرنے کے لیے وسائل کی تقسیم بھی اہم ہے۔ اگر پالیسی کی نوعیت ترقیاتی ہے، تو شفاف مالیاتی ڈھانچے کو تشکیل دینا بہت ضروری ہے۔ عوامی پالیسی کے اہداف کے لیے عوامی پالیسی کی ساخت ضروری ہے۔ لہٰذا، وہاں سادہ اور روانی سے انتظامی عمل درآمد کے منصوبے بنائے جائیں۔

مزید یہ کہ عوامی پالیسیوں پر عمل درآمد کے لیے وقت کی میعاد  بہت اہم ہے۔ لہذا، یہ ضروری ہے کہ اس میں شامل تمام تنظیمیں اپنے کاموں اور ذمہ داریوں کو مقررہ معیاد پر پورا کریں۔ عوامی تنظیموں کی خودمختاری کا خیال ہمیشہ عام کیڈر سروسز کی طرف سے رکاوٹ ہے، جو وفاقی، صوبائی اور مقامی عوامی تنظیموں کے تقریباً تمام اعلیٰ عہدوں کو کنٹرول کرتی ہیں۔ عوامی پالیسیوں کے نفاذ کے لیے جنرل کیڈر کی خدمات کا خاتمہ اور خود مختار عوامی تنظیموں کی ترقی بہت ضروری ہے۔

پاکستان میں عوامی پالیسی کے نفاذ کے لیے سب سے بڑا چیلنج اشرافیہ کا مفاد ہے۔ تمام عوامی پالیسی کے عمل بشمول تشکیل، تبدیلی، اپنانے اور عمل درآمد، اشرافیہ کے مفادات کے تحفظ کے لیے کیے جاتے ہیں۔

آخر میں، پاکستان میں عوامی تنظیموں کی تنظیم نو کی ضرورت ہے۔ پھر ان کو نافذ کرنا نہ صرف حکومت کی ذمہ داری ہےبلکہ لوگوں پر بھی یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ ان پالیسیوں کے نافذ کے لیے جدوجہد کریں۔پاکستان میں عوامی پالیسیوں کو نافذ کرنے کے لیے انتظامی ڈھانچے، ضابطہ اخلاق، اور آپریشنز پر محیط پورے عوامی حکمرانی کے نظام میں اصلاحات لانا اشد ضروری ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1