Premium Content

Add

پاکستان میں لاپتہ افراد سے متعلق سپریم کورٹ کی سماعت کا تنقیدی جائزہ

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: بیرسٹر رومان ملک

سپریم کورٹ آف پاکستان کی لاپتہ افراد اور جبری گمشدگیوں کے کیس کی سماعت نے اہم خدشات اور پیش رفت کے امکانات کو جنم دیا ہے۔ پاکستان میں لاپتہ افراد کے معاملے پر سپریم کورٹ کی حالیہ سماعت نے ملک میں انصاف، انسانی حقوق اور قانون کی حکمرانی کے بارے میں اہم سوالات اٹھائے ہیں۔ آپ نے جو حفاظتی رہنما خطوط بیان کیے ہیں ان پر عمل کرتے ہوئے کارروائی کا ایک اہم جائزہ یہ ہے:۔

مثبت پیش رفت:۔

چیف جسٹس کا عزم: لاپتہ افراد کے معاملے کو حل کرنے کے لیے عدالت کے ارادے کا اظہار کرنے والے چیف جسٹس کے پختہ بیانات حوصلہ افزا ہیں۔ عدالت کی طرف سے اہل خانہ کے ساتھ بات چیت کرنے اور صورتحال کی سنگینی کو تسلیم کرنے کی خواہش پیشرفت کی امید فراہم کرتی ہے۔

قانونی حیثیت پر توجہ: چیف جسٹس کا قانونی حدود میں رہنے اور اداروں کو جوابدہ رکھنے پر اصرار ایک منصفانہ اور غیر جانبدارانہ قانونی نظام کے اصولوں کو برقرار رکھنے کے لیے ضروری ہے۔

شہری حقوق کی پہچان: گمشدگیوں کے خلاف پرامن احتجاج کے شہریوں کے حق کو تسلیم کرنا عدالت کی بنیادی آزادیوں اور جمہوری اقدار سے وابستگی کو ظاہر کرتا ہے۔

تشویش کے امکانات:۔

ممکنہ سیاسی کاری: پی ٹی آئی کی طرف سے معاملے کی ممکنہ سیاسی کاری کے بارے میں چیف جسٹس کا مشاہدہ تعصب کے بارے میں خدشات اور عدالت کو پوری کارروائی میں غیر جانبداری برقرار رکھنے کی ضرورت کو جنم دیتا ہے۔

بااثر مقدمات پر توجہ: بااثر افراد پر مشتمل مقدمات پر توجہ مرکوز کرنے کے بارے میں چیف جسٹس کے ریمارکس کو عام شہریوں کی حالت زار کو نظر انداز کرنے کے طور پر سمجھا جا سکتا ہے جو گمشدگیوں کا شکار بھی ہوئے ہیں۔

کمیشن کی تاثیر: جسٹس اقبال کی سربراہی میں قائم کیے گئے کمیشن کی جانب سے پیش رفت نہ ہونے سے اس مسئلے کو حل کرنے میں ایسے اداروں کے احتساب اور مؤثریت پر سوالات اٹھتے ہیں۔

قانون سازی کا فرق: جبری گمشدگیوں پر مخصوص قانون سازی کی عدم موجودگی اس مسئلے کو مؤثر طریقے سے حل کرنے میں ایک بڑی رکاوٹ بنی ہوئی ہے۔ پارلیمنٹ کو قانون سازی کا حکم دینے پر چیف جسٹس کے تحفظات عدلیہ اور قانون سازی کی شاخوں کے درمیان پیچیدہ تعلقات کو اجاگر کرتے ہیں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

سفارشات اور مستقبل کے لیے لائحہ عمل:۔

شفاف عمل: عدالت کو اپنی کارروائی میں شفافیت کو یقینی بنانا چاہیے اور خاندانوں اور عوام کے لیے معلومات کو آسانی سے دستیاب کرانا چاہیے۔

غیر جانبدارانہ تحقیقات: مکمل اور غیر جانبدارانہ تحقیقات، سیاسی یا ادارہ جاتی مداخلت سے پاک، گمشدگیوں کے پیچھے کی حقیقت کو بے نقاب کرنے اور مجرموں کو جوابدہ ٹھہرانے کے لیے اہم ہیں۔

قانونی فریم ورک کو مضبوط بنانا: جبری گمشدگیوں پر ایک جامع قانون کا نفاذ انصاف کے حصول اور مستقبل میں ہونے والی خلاف ورزیوں کو روکنے کے لیے ایک واضح قانونی ڈھانچہ فراہم کرے گا۔

سول سوسائٹی کے ساتھ مشغولیت: انسانی حقوق کی تنظیموں، کارکنوں، اور لاپتہ افراد کے اہل خانہ کے ساتھ تعاون قیمتی بصیرت اور عدالت کی کوششوں کو تقویت دے سکتا ہے۔

لاپتہ افراد کے معاملے پر سپریم کورٹ کی مصروفیت ایک دیرینہ اور دل دہلا دینے والی ناانصافی سے نمٹنے کی جانب ایک اہم قدم ہے۔ آگے بڑھتے ہوئے، یہ ضروری ہے کہ منصفانہ اور غیر جانبدارانہ کارروائی کو یقینی بنایا جائے، تمام شہریوں کے حقوق کو ترجیح دی جائے، اور ایک جامع قانونی فریم ورک کے لیے کوشش کی جائے جو بنیادی آزادیوں کی حفاظت کرتا ہو اور سب کے لیے انصاف کی ضمانت دیتا ہو۔

اگرچہ سپریم کورٹ کی سماعت ترقی کے لیے امید کی کرن پیش کرتی ہے، لیکن آگے کی پیچیدگیوں اور چیلنجوں کو پہچاننا بہت ضروری ہے۔ لاپتہ افراد کے معاملے کو مؤثر طریقے سے حل کرنے اور پاکستان میں گمشدگیوں کو نافذ کرنے کے لیے تعاون، شفاف تحقیقات، قانون سازی کی کارروائی اور بین الاقوامی تعاون کے لیے مستقل عزم ضروری ہے۔ صرف اسی صورت میں خاندانوں کے لیے حقیقی انصاف اور بندش حاصل کی جا سکتی ہے اور ایک زیادہ محفوظ اور انصاف پسند معاشرے میں حصہ ڈالا جا سکتا ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1