Premium Content

Add

سیاسی خودمختاری

Print Friendly, PDF & Email

پاکستان کی مخلوط حکومت کی تشکیل کے بارے میں امریکہ کا مستقل موقف ملک کی خودمختاری اور داخلی عمل کی زبردست توثیق ہے۔ یہ ایک واضح اعلان ہے کہ پاکستان کے معاملات اس کے اپنے ہیں، اور کوئی بیرونی ادارہ یا ملک پاکستان کو سیاسی منظر نامے میں معاملات چلانے کے لیے حکم نہیں دے سکتا۔ ایک ایسی دنیا میں جہاں ملکی معاملات میں مداخلت اکثر بین الاقوامی تشویش کا روپ دھار لیتے ہیں، امریکہ کا یہ بیان ملک کی خود مختاری کے جرات مندانہ اثبات کے طور پر کام کرتا ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان  ملر سے عمران خان کی نئی مخلوط حکومت سے علیحدگی پر ان کے خیالات پوچھے گئے۔ سوال، جو اس امید کے ساتھ پوچھا گیا ہو گا کہ ترجمان کچھ مذمت یا مداخلت کا ارادہ ظاہر کرے گا، غیر متوقع طور پر ملر نے بیان دیا کہ پاکستان کے معاملات اندرونی ہیں اور ایسے حالات میں اتحاد اکثر ہوتا ہے۔ یہ الفاظ بجا طور پر دوسری قوموں کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کے اصول کی بازگشت کرتے ہیں۔ یہ صرف سفارتی کاموں کا معاملہ نہیں ہے، بلکہ یہ ہمارے جمہوری اصولوں کا مضبوط دفاع ہے۔ ان حالات میں جن میں پاکستان خود کو پا چکا ہے، اس وقت اتحاد سازی اس کے لیے مساوی ہے۔ اس حقیقت کو تسلیم کرتے ہوئے اور اس کا احترام کرتے ہوئے، امریکہ دیگر اقوام کے اندر متنوع سیاسی حرکیات کی جانداریت کو فعال طور پر تسلیم کر رہا ہے، اور یہ قبول کر رہا ہے کہ یہ ایسی صورت حال ہے جسے ہم نے اور اکیلے ہی سنبھالنا ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

تاہم، اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہمارے کندھوں پر اب بھی کوئی زبردست ذمہ داری نہیں ہے۔ انتخابی بے ضابطگیوں کے الزامات کی تحقیقات کا امریکی مطالبہ اس بات کا ثبوت ہے کہ اگرچہ وہ خودمختاری کو اہمیت دیتے ہیں لیکن وہ جمہوری اصولوں کو برقرار رکھنے پر بھی یقین رکھتے ہیں۔ انتخابی عمل کی سخت جانچ پڑتال جمہوریت کی بنیاد ہے، اور پاکستان پر زور دے کر کہ وہ ان خدشات کو دور کرے، امریکہ مداخلت نہیں کر رہا ہے۔

جیسا کہ ہم آگے بڑھیں گے، پاکستان کو ان مطالبات کو مسلط کرنے کے طور پر نہیں بلکہ ترقی کے مواقع کے طور پر ماننا چاہیے۔ انتخابی بے ضابطگیوں کے الزامات کا جواب بین الاقوامی اتحادیوں کو خوش کرنے کی امید میں نہیں لگانا چاہیے، بلکہ یہ ہمارے سیاسی اور جمہوری استحکام کو برقرار رکھنے کا معاملہ ہے۔ اس کوشش میں سیاسی دھڑوں، سول سوسائٹی اور بین الاقوامی اتحادیوں کے درمیان تعاون سب سے اہم ہے، اور اب ہماری جمہوریت میں ضروری اصلاحات کے لیے فوری اقدامات کی ضرورت ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1