Premium Content

Add

طلبہ یونین کی بحالی

Print Friendly, PDF & Email

لاہور میں حالیہ مارچ، جس کی قیادت پروگریسو سٹوڈنٹس کر رہے ہیں، پاکستان کے نوجوانوں کی طرف سے طلبہ یونینوں کی بحالی کے لیے کیے گئے فوری مطالبے کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ اس نسل کی صرف ایک مثال تھی جو نہ صرف نمائندگی کا مطالبہ کرتی ہے بلکہ تعلیمی اداروں کو درپیش نظاماتی مسائل کے حل کا بھی مطالبہ کرتی ہے: کیمپس میں ہراساں کرنا، خاص طور پر طالبات کو ہراساں کرنا، مؤثر انسداد ہراساں کرنے والی کمیٹیوں کی عدم موجودگی، اور یونیورسٹی کی پالیسیوں میں طلبہ کے ساتھ غیر مساوی سلوک۔ یہ شکایات، وسیع تر سماجی سیاسی خدشات جیسے کہ جبری گمشدگیوں، مہنگائی اور زیادہ فیسوں کے ساتھ مل کر اس بات کی نشاندہی کرتی ہیں کہ طلبہ یونینز کے کثیر جہتی کردار ادا کر سکتے ہیں۔

 یہ واضح ہے کہ سندھ اسٹوڈنٹس یونین بحالی ایکٹ اور اسی طرح کے اقدامات اہم پیش رفت کی نشاندہی کرتے ہیں، لیکن چیلنج ان یونینز کو موثر اور خود مختار طریقے سے چلانے کو یقینی بنانا ہے۔ یونیورسٹیوں کو بیرونی سیاسی اثرات سے بچتے ہوئے انتظامی فیصلوں میں طلباء کی آوازوں کو ضم کرنے میں توازن رکھنا چاہیے۔ طلباء کی طرف سے اٹھائے گئے خدشات — مفت تعلیم، فیصلہ ساز اداروں میں منصفانہ نمائندگی، اور کیمپس کی پالیسیوں میں مساوی سلوک — طلباء یونینوں کے ماہرین تعلیم سے بالاتر مسائل کو حل کرنے کی صلاحیت کو ظاہر کرتے ہیں۔ وہ سماجی تبدیلی کے لیے اہم ترین کردار ادا کر سکتے ہیں، بحث، رواداری اور جمہوری مشغولیت کے کلچر کو فروغ دے سکتے ہیں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

تاہم، جیسا کہ طلبہ یونینوں کی بحالی کے بارے میں بات چیت آگے بڑھ رہی ہے، ماضی کے اسباق پر دھیان دینا بہت ضروری ہے۔ سیاسی دھڑوں کی طرف سے طلباء کی تنظیموں کا تاریخی غلط استعمال جو کیمپس میں تشدد اور آزادی اظہار کو دبانے کا باعث بنتا ہے، کو دہرایا نہیں جانا چاہیے۔ ایک ضابطہ اخلاق، جس پر تمام اسٹیک ہولڈرز متفق ہیں، اس بات کو یقینی بنانے کے لیے ضروری ہے کہ طلبہ یونینز فلاحی اور جمہوری اقدار کو سیاسی ایجنڈوں پر ترجیح دیں۔ طلباء یونینوں کی بحالی ایک قانون سازی یا انتظامی فیصلے سے زیادہ ہے: یہ نوجوانوں کی طرف سے ایک واضح کال کا جواب ہے۔ یہ ایک نسل کو بااختیار بنانے کے بارے میں ہے کہ وہ نہ صرف اپنے تعلیمی ماحول بلکہ قوم کے مستقبل کو بھی تشکیل دے سکے۔ چونکہ پاکستان ایک دوراہے پر کھڑا ہے، طلبہ یونینوں کی بحالی سیاسی طور پر آگاہ، سماجی طور پر ذمہ دار، اور جمہوری طور پر مصروف نوجوانوں کی پرورش کی طرف ایک قدم ہو سکتی ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1