Premium Content

Add

ایشیائی ترقیاتی بینک کا پاکستان کی معاشی صورتحال کا جائزہ

Print Friendly, PDF & Email

ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کی معاشی صورتحال کا ایک انتہائی ضروری جائزہ جاری کیا ہے، اور اب تک کی رپورٹ ظاہر کرتی ہے کہ نقطہ نظر بنیادی طور پر مثبت ہے، بشرطیکہ بعض شعبوں میں احتیاط برتی جائے۔

اگرچہ ملک میں مختلف اشاریوں میں بہتری کی توقع ہے، جیسے افراط زر، جی ڈی پی کی نمو، سیلاب کے بعد زرعی بحالی، اور محصولات کی وصولی، یہ سب سیاسی استحکام اور بہتر سکیورٹی کے اہم کردار پر منحصر ہے تاکہ ہم اس مثبت رفتار کو برقرار رکھ سکیں۔

سب سے پہلے، افراط زر اور جی ڈی پی کی نمو میں متوقع بحالی مجموعی طور پر معیشت کے لیے ایک مثبت رجحان کو ظاہر کرتی ہے۔ توقع کی جاتی ہے کہ سیلاب کے بعد کی زرعی بحالی ہمارے زرعی شعبے کو مضبوط بنا کر اس ترقی میں حصہ ڈالے گی اور اس کے نتیجے میں ہماری مینوفیکچرنگ کو بھی سپورٹ کرے گی، جس کی ہمیں طویل عرصے سے شدید کمی ہے۔ مزید برآں، ٹیکس کی وصولی میں اضافہ، حکومت کی طرف سے اٹھایا گیا ایک بڑا قدم، جس کی ریونیو کو متحرک کرنے میں اس کی مدد کے لیے توثیق کی گئی، اور اس نے واضح کر دیا ہے کہ ہمارا طریقہ کار کیا ہونا چاہیے۔

یہ سب مثبت اشارے ہیں لیکن پچھلے کچھ سالوں سے پاکستان کی معیشت کی تباہی، اس کا سیاسی استحکام اور سلامتی رہی ہے، اور یہ اب طویل مدتی اقتصادی ترقی کے لیے ناقابل تردید شرائط ہیں۔ سیاسی عدم استحکام کا مطلب یہ ہوگا کہ ہم نے جو کچھ کیا ہے اسے ختم کیا جا سکتا ہے۔ ہمیں اپنی اصلاحی کوششوں میں پائیداری کے احساس کی ضرورت ہے۔ ہمیں سرمایہ کاروں میں اعتماد پیدا کرنے کے لیے ایک سازگار سیاسی ماحول پیدا کرنے کی پوری کوشش کرنی چاہیے جو ہماری ترقی میں سہولت فراہم کر سکے۔

مشرق وسطیٰ میں جنگ کے اثرات بہت سے ممالک کے کندھوں پر پڑے ہیں اور پاکستان بھی اس سے محفوظ نہیں ہے۔ تنازعات میں اضافے کے نتیجے میں عالمی سپلائی چینز میں کوئی بھی رکاوٹ پاکستان کی معیشت پر منفی اثر ڈال سکتی ہے۔ لہٰذا، ہمارے پالیسی سازوں کو ملک کے معاشی مفادات کے تحفظ اور ممکنہ نقصان کو کم سے کم کرنے کے لیے جغرافیائی سیاسی خطرات سے نمٹنے کے لیے چوکس اور فعال رہنے کی ضرورت ہے۔

اب آگے بڑھنے کے لیے سیاسی تسلسل ناگزیر ہے۔ سب سے طویل عرصے سے، ہم مختلف حل تلاش کر رہے ہیں، یہ دیکھنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ کون سا کام کرتا ہے۔ ابھی کے لیے راستہ واضح کر دیا گیا ہے۔ ہمیں اپنی سرحدوں پر عسکریت پسندی کو ختم کرنے کی کوششیں جاری رکھنی چاہئیں یا کسی بھی سکیورٹی خطرے سے جو ہماری قوم کے استحکام کو متاثر کر سکتا ہے۔ قوم کو پولرائز کرنے یا فساد برپا کرنے کی کسی بھی کوشش سے فوری طور پر نمٹا جانا چاہیے۔ یہ ترقی کا سنہری موقع ہے، اور اسے ضائع نہیں کیا جا سکتا۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1