Premium Content

Add

انٹرا پارٹی انتخابات میں تضاد پایا گیا تو پی ٹی آئی کو نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا، چیف جسٹس سپریم کورٹ

Print Friendly, PDF & Email

اسلام آباد :چیف جسٹس آف پاکستان قاضی فائز نے کہا ہے کہ اگر پاکستان تحریک انصاف کے انٹرا پارٹی انتخابات میں تضاد پایا گیا تو اسے نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔

یہ تبصرہ پی ٹی آئی کے انٹرا پارٹی انتخابات اور انتخابی نشان کے حوالے سے پشاور ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے دائر اپیل کی سماعت کے دوران کیا گیا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ الیکشن کمیشن ایک آئینی ادارہ ہے، عدالت کو اس کے معاملات میں مداخلت نہیں کرنی چاہیے۔انہوں نے زور دے کر کہا کہ سپریم کورٹ کو آئینی ادارے کے فرائض نہیں سنبھالنے چاہئیں۔

چیف جسٹس نے نوٹ کیا کہ جمہوریت ایک بنیادی حق ہے، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ اسے نہ صرف ایک ملک میں بلکہ ایک سیاسی گروپ میں بھی غالب ہونا چاہیے۔

حامد خان نے کہا کہ وہ پیر تک دلائل دینے کے لیے تیار ہوں گے۔ ای سی پی کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ کمیشن کو ہفتے کو انتخابی نشانات الاٹ کرنے کی اجازت دی جائے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ پیر سے کیس کی کارروائی شروع ہونے کی صورت میں عدالت کو پی ایچ سی کا فیصلہ معطل کرنا پڑے گا۔ اس کے بعد انہوں نے کہا کہ عدالت ہفتہ اور اتوار کو بھی کیس کی سماعت کرنے کے لیے تیار ہے۔

اس کے بعد حامد نے کیس کی تیاری کے لیے ہفتہ تک کا وقت مانگا۔ ای سی پی نے موقف اختیار کیا کہ پی ٹی آئی نے اپنے آخری انٹرا پارٹی انتخابات 2017 میں کرائے، پارٹی 2022 میں الیکشن کرانے کی پابند تھی، ای سی پی نے پارٹی آئین کے مطابق الیکشن نہ کرانے پر پی ٹی آئی کو نوٹس جاری کیا۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

جیسا کہ چیف جسٹس نے پارٹی کے انتخابات کے لیے چیف الیکشن کمشنر کے نوٹیفکیشن کے بارے میں استفسار کیا، حامد نے کہا کہ انہیں مطلوبہ دستاویزات پیش کرنے کے لیے کچھ وقت درکار ہے۔

اس کے بعد انہوں نے عدالت سے درخواست کی کہ وہ ای سی پی کی اپیل کو برقرار رکھنے سے متعلق پہلے دلائل سنے۔ انہوں نے کہا کہ وہ دلائل دیں گے کہ ای سی پی کی اپیل کو سننے کا کوئی قانونی جواز نہیں ہے۔

پی ٹی آئی کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ ای سی پی سپریم کورٹ میں اپیل دائر نہیں کر سکتا۔ صرف متاثرہ فریق ہی سپریم کورٹ جا سکتا تھا اور ای سی پی کے پاس خود عدالت سے رجوع کرنے کی کوئی قانونی بنیاد نہیں ۔

چیف جسٹس نے کہا کہ کیا الیکشن کمیشن اپنے فیصلے کا دفاع نہیں کرے گا؟ پی ٹی آئی کے وکیل نے پھر پوچھا کہ کیا کوئی جج اپنی عدالت کے خلاف جاری ہونے والے کسی بھی فیصلے کے خلاف اعلیٰ عدالت میں اپیل دائر کر سکتا ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ تمام سیاسی جماعتوں کے کام کو منظم کرنا اور شفاف انتخابات کا انعقاد الیکشن کمیشن کا فرض ہے۔ وکیل حامد خان نے کہا کہ عدالت عظمیٰ کے فیصلے کے مطابق کوئی ادارہ اپنے جاری کردہ کسی فیصلے کے دفاع کے لیے اپیل دائر نہیں کر سکتا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کسٹم کلکٹرز نے اپنے فیصلوں کے خلاف جاری کیے گئے فیصلوں کے خلاف بھی اپیلیں دائر کیں۔ ہائی کورٹ میں پی ٹی آئی کی اپیل کی برقراری پر بھی سوال اٹھایا جا سکتا ہے۔ اگر ای سی پی اپیل میں نہیں جاتا تو اس کے فیصلے بے معنی ہو جائیں گے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1