Premium Content

Add

پاکستان میں غذائی تحفظ کی اہمیت اور اسے کیسے حاصل کیا جائے؟

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: جمشید احمد اعوان

غذائی تحفظ وہ حالت ہے جس میں تمام لوگوں کو ہر وقت محفوظ، اور غذائیت سے بھرپور خوراک تک جسمانی، سماجی اور اقتصادی رسائی حاصل ہو جو ایک فعال اور صحت مند زندگی کے لیے ان کی غذائی ضروریات اور خوراک کی ترجیحات کو پورا کرے۔ کسی ملک کے لیے غذائی تحفظ ضروری ہے کیونکہ یہ اس کے معاشی، سماجی اور سیاسی استحکام کے ساتھ ساتھ اس کی انسانی ترقی اور ماحولیاتی استحکام کو متاثر کرتا ہے۔

خوراک کی حفاظت کسی ملک کے معاشی استحکام میں اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ اس کی آبادی کو خوراک اور دیگر بنیادی ضروریات تک رسائی کے لیے مناسب آمدنی اور قوت خرید حاصل ہو۔ غذائی تحفظ زرعی شعبے کی پیداواری صلاحیت اور مسابقت کی بھی حمایت کرتا ہے، جو کہ بہت سے ممالک کے لیے آمدنی، روزگار اور زرمبادلہ کا ایک بڑا ذریعہ ہے۔ مزید برآں، خوراک کی حفاظت کسی ملک کے بیرونی عناصر جیسے قیمتوں میں اتار چڑھاو، تجارتی پابندیوں، یا قدرتی آفات کے خطرے کو کم کرتی ہے جو خوراک کی طلب اور رسد میں خلل ڈال سکتی ہیں۔

غذائی تحفظ کسی ملک کی آبادی میں غربت، بھوک، غذائیت کی کمی اور عدم مساوات کے واقعات اور شدت کو کم کرکے اس کے سماجی استحکام کو بڑھاتا ہے۔ خوراک کی حفاظت آبادی کی صحت اور تعلیم کے نتائج کو بھی بہتر بناتی ہے، خاص طور پر بچوں اور خواتین، جو خوراک کی عدم تحفظ کے منفی اثرات کا زیادہ شکار ہوتے ہیں۔ مزید برآں، خوراک کی حفاظت سماجی تنازعات اور تشدد کو روکتی یا کم کرتی ہے جو خوراک کی کمی، محرومی، یا ناانصافی سے پیدا ہو سکتے ہیں۔

خوراک کی حفاظت حکومت اور اس کے اداروں کی قانونی حیثیت اور جوابدہی کو بڑھا کر ملک کے سیاسی استحکام کو مضبوط کرتی ہے۔ غذائی تحفظ جمہوری عمل اور فیصلہ سازی میں آبادی کی شرکت اور بااختیار بنانے کو بھی فروغ دیتا ہے۔ مزید برآں، غذائی تحفظ تجارت، امداد، یا سفارت کاری کے ذریعے دوسرے ممالک اور خطوں کے ساتھ ایک ملک کے تعاون اور انضمام کو فروغ دیتا ہے۔

خوراک کی حفاظت ملک کی آبادی کی صلاحیتوں اور طویل، صحت مند، پیداواری اور بھرپور زندگی گزارنے کی صلاحیتوں کو بڑھا کر اس کی انسانی ترقی کی حمایت کرتی ہے۔ خوراک کی حفاظت آبادی کو اپنے انسانی حقوق اور وقار سے لطف اندوز ہونے کے قابل بناتی ہے، جیسے خوراک، صحت، تعلیم، کام اور آزادی کا حق۔ غذائی تحفظ دیگر ترقیاتی اہداف کے حصول میں سہولت فراہم کرتا ہے جیسے غربت میں کمی، صنفی مساوات، معیاری تعلیم، اچھی صحت اور بہبود، معقول کام اور اقتصادی ترقی۔

خوراک کی حفاظت کسی ملک کے قدرتی وسائل، جیسے کہ زمین، پانی، حیاتیاتی تنوع، اور آب و ہوا کو خوراک پیدا کرنے کے لیے موثر اور ذمہ داری کے ساتھ استعمال کرنے کو یقینی بنا کر اس ملک کی ماحولیاتی پائیداری پر منحصر ہے اور اس میں تعاون کرتی ہے۔ غذائی تحفظ ماحولیات پر خوراک کی پیداوار اور کھپت کے منفی اثرات کو بھی کم کرتا ہے، جیسے آلودگی، فضلہ، گرین ہاؤس گیسوں کا اخراج، جنگلات کی کٹائی، یا زمین کا انحطاط۔ غذائی تحفظ پائیدار طریقوں کو اپنانے کی حوصلہ افزائی کرتا ہے جیسے نامیاتی کاشتکاری، زرعی جنگلات، زراعت کا تحفظ ، یا موسمیاتی سمارٹ زراعت جو ماحول کو محفوظ رکھتے ہوئے غذائی تحفظ کو بڑھا سکتی ہے۔

پاکستان میں غذائی تحفظ ایک پیچیدہ اور کثیر جہتی مسئلہ ہے جس میں مختلف انتظامی، زرعی، اقتصادی، ذخیرہ اندوزی، اسمگلنگ، پیداوار اور اس سے منسلک نقطہ نظر شامل ہیں۔

پاکستان میں غذائی تحفظ حکومت کے مختلف سطحوں اور شعبوں کے درمیان موثر نظم و نسق اور ہم آہنگی کے فقدان کے ساتھ ساتھ خوراک کی پیداوار، تقسیم، معیار اور حفاظت سے متعلق پالیسیوں اور قوانین کے کمزور نفاذ سے متاثر ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر، فوڈ سکیورٹی کے حوالے سے وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے درمیان کردار اور ذمہ داریوں کی کوئی واضح تقسیم نہیں ہے، جس کی وجہ سے خدمات کی فراہمی میں خلاء پیدا ہوتا ہے۔ خوراک کے ذخیرے اور ریلیف کے انتظام میں زیادہ شفافیت اور جوابدہی کی ضرورت ہے ۔ خوراک کے معیار اور حفاظت کے لیے ریگولیٹری فریم ورک اور معیارات کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے، ساتھ ہی تعمیل کو یقینی بنانے اور ملاوٹ، آلودگی اور خوراک کے ضیاع کو روکنے کے لیے نگرانی اور معائنہ کے طریقہ کار کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔

پاکستان میں غذائی تحفظ زرعی شعبے کی کارکردگی اور پائیداری سے بھی متاثر ہوتا ہے، جسے کئی چیلنجز کا سامنا ہے، جیسے کہ کم پیداواری صلاحیت، ان پٹ کا غیر موثر استعمال، پانی کی کمی، زمین کا انحطاط، موسمیاتی تبدیلی، کیڑوں کا حملہ، اور قدرتی آفات۔ مثال کے طور پر، پاکستان کی فصلوں کی پیداوار خطے میں سب سے کم ہے جس کی وجہ بہتر بیج کا فقدان، کھاد، کیڑے مار ادویات، آبپاشی، میکانائزیشن، توسیعی خدمات، اور چھوٹے کاشتکاروں کا قرضے تک رسائی نہ ہونا ہے۔ بڑھتی ہوئی طلب، ناقص انتظام، ضیاع، آلودگی اور موسمیاتی تغیرات پاکستان کے آبی وسائل پر دباؤ ڈالتے ہیں۔ مزید برآں، پاکستان کی زراعت موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات، جیسے بڑھتے ہوئے درجہ حرارت، بارشوں کے بے ترتیب انداز، خشک سالی، سیلاب، گرمی کی لہروں اور فصلوں کی ناکامی کے لیے خطرے سے دوچار ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

پھر، پاکستان میں غذائی تحفظ کا انحصار ان معاشی حالات اور پالیسیوں پر بھی ہے جو آبادی کے مختلف طبقات کے لیے خوراک کی دستیابی اور استطاعت کو متاثر کرتی ہیں۔ مثال کے طور پر، حالیہ برسوں میں سیاسی عدم استحکام، سیکورٹی کے مسائل، مالیاتی خسارے، قرضوں کا بوجھ، مہنگائی، تجارتی عدم توازن، توانائی کے بحران اور کوووڈ-19کی وبا کی وجہ سے پاکستان کی اقتصادی ترقی سست اور ناہموار رہی ہے۔ ان کے نتیجے میں آمدنی کی کم سطح، بے روزگاری کی بلند شرح، غربت کی بڑھتی ہوئی شرح، اور مختلف خطوں اور گروہوں کے درمیان عدم مساوات میں اضافہ ہوا ہے۔

پاکستان میں فوڈ سکیورٹی تاجروں کی جانب سے قیاس آرائیوں یا منافع خوری کے لیے ذخیرہ اندوزی سے بھی متاثر ہوتی ہے۔ یہ عمل مصنوعی قلت پیدا کرتا ہے اور بازار میں اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ کرتا ہے۔ مثال کے طور پر، 2020-2021 میں، پاکستان میں گندم کا بحران جزوی طور پر فلور ملرز کی ذخیرہ اندوزی کی وجہ سے تھا جنہوں نے قلت پیدا کرنے اور قیمتوں میں اضافے کے لیے مارکیٹ سے گندم کا ذخیرہ روک دیا۔ اسی طرح، 2020 میں، پاکستان میں چینی کے بحران کی وجہ جزوی طور پر شوگر مل مالکان کی ذخیرہ اندوزی تھی جنہوں نے سپلائی کو کم کرنے اور قیمتوں میں اضافے کے لیے گنے کی کرشنگ میں تاخیر کی۔ ذخیرہ اندوزی سے صارفین اور پروڈیوسروں کو نقصان پہنچتا ہے جنہیں اپنی فصلوں کی مناسب قیمت نہیں ملتی۔

پاکستان میں غذائی تحفظ بھی پڑوسی ممالک جیسے افغانستان یا ایران کے ساتھ خوراک کی اشیاء کی اسمگلنگ یا غیر قانونی سرحد پار تجارت سے متاثر ہے۔ یہ رجحان ملکی ضرورت کو کم کرتا ہے اور پاکستان میں اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ کرتا ہے۔ مثال کے طور پر، 2020-2021 میں، پاکستان میں گندم کا بحران افغانستان کو گندم کی اسمگلنگ سے بھی بڑھ گیا، جہاں زیادہ مانگ کی وجہ سے اس کی قیمتیں زیادہ ہوئیں۔ اسی طرح، 2020 میں، پاکستان میں چینی کا بحران افغانستان یا ایران کو چینی کی اسمگلنگ سے بھی بڑھ گیا، جہاں یہ کم پیداوار یا پابندیوں کی وجہ سے زیادہ نرخوں پر فروخت ہوئی۔ اسمگلنگ نہ صرف حکومت کو محصولات سے محروم کرتی ہے بلکہ خوراک کی قیمتوں کو مستحکم کرنے کی اس کی کوششوں کو بھی نقصان پہنچاتی ہے۔

آخر میں، پاکستان کو اپنی غذائی تحفظ کو بڑھانے کے لیےسخت قوانین کا نفاذ بہت ضروری ہے۔پاکستان کو خوراک اور اس سے متعلقہ محکموں کی استعداد کار میں اضافہ کرنے کی ضرورت ہے، کیونکہ یہ موضوع صوبوں کے حوالے کیا گیا ہے۔ کسانوں کے حق میں مستقل پالیسیوں کے ساتھ فعال خوراک کے محکمے اور زمین کا انتظام پاکستان میں خوراک کی بہتر حفاظت کو یقینی بنائے گا۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1