Premium Content

Add

پاکستان میں گورننس میں کرپشن کے خاتمے کی اہمیت

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: ظفر اقبال

بدعنوانی سےمراد ذاتی فائدے کے لیے سونپی گئی طاقت کا غلط استعمال ہے۔ حکمرانی میں بدعنوانی ایک وسیع اور تباہ کن قوت ہے جو معاشرے کی بنیادوں کو کمزور کر دیتی ہے۔ بدعنوانی مختلف طرح کی ہو سکتی ہےجیسے کہ رشوت، غبن، اقربا پروری اور دھوکہ دہی۔

مقننہ میں کرپشن:۔

قانون ساز اہم عہدوں پر فائز ہوتے ہیں، جن کو قوانین بنانے اور پالیسیوں کی تشکیل کا کام سونپا جاتا ہے ۔جب بدعنوانی قانون سازی میں شامل ہو جاتی ہے، تو یہ ایسے قوانین کے نفاذ کا باعث بنتی ہے جو عام بھلائی کے بجائے خصوصی مفادات کو ترجیح دیتے ہیں۔ رشوت ستانی اور اقربا پروری قانون سازی کے عمل کو متاثر کر سکتی ہے، اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ ذاتی فائدے عوام کی فلاح و بہبود پر مقدم ہوں۔

پاکستان میں، مقننہ میں بدعنوانی کی مثالوں میں رشوت ، کک بیکس ، خاندان اور دوستوں کو منافع بخش منصوبے دینا شامل ہیں۔ اس طرح کے طرز عمل حکومت پر عوامی اعتماد کو ختم کرتے ہیں اور اچھی حکمرانی کے حصول میں رکاوٹ بنتے ہیں۔

ایگزیکٹو میں کرپشن:۔

ایگزیکٹو برانچ، جو کہ قوانین اور پالیسیوں کو نافذ کرنے کی ذمہ دار ہے، بدعنوانی کے لیے ایک اور زرخیز زمین ہے۔ جب سرکاری اہلکار ذاتی فائدے کے لیے اپنے اختیارات کا غلط استعمال کرتے ہیں، تو یہ وسائل کی غلط تقسیم، نااہلی اور جوابدہی کی کمی کا باعث بنتا ہے۔ رشوت اور کک بیکس فیصلہ سازی کو متاثر کر سکتے ہیں، جس کے نتیجے میں نااہل یا بدعنوان افراد کو منصوبے دیے جا سکتے ہیں۔

پاکستان میں، ایگزیکٹو برانچ میں بدعنوانی ایک مستقل مسئلہ رہا ہے، جس میں عوامی فنڈز کے غلط استعمال، غبن اور سرکاری خریداری میں جانبداری کے الزامات ہیں۔ اس طرح کے طرز عمل وسائل کو ضروری خدمات سے دور کر دیتے ہیں، ترقی میں رکاوٹ اور غربت کو برقرار رکھتے ہیں۔

عدلیہ میں کرپشن:۔

عدلیہ، انصاف کی محافظ اور قانون کی حکمرانی کرپشن سے محفوظ نہیں۔ جب جج رشوت یا ذاتی اثر و رسوخ سے متاثر ہوتے ہیں تو یہ قانونی نظام کی سالمیت کو مجروح کرتا ہے اور عدلیہ پر عوام کا اعتماد ختم کرتا ہے۔

پاکستان میں، عدلیہ میں بدعنوانی کے واقعات نے تشویش کو جنم دیا ہے، جن میں جانبدارانہ فیصلوں، جانبداری اور رشوت لینے کے الزامات شامل ہیں۔ اس طرح کے طرز عمل قانونی عمل کو مسخ کرتے ہیں، بے گناہوں کو انصاف فراہمی میں رکاوٹ بنتی ہے۔

پاکستان کے اداروں میں کرپشن:۔

کرپشن صرف سرکاری اداروں تک محدود نہیں ہے۔ یہ مختلف اداروں بشمول تعلیمی اداروں، صحت عامہ فراہم کرنے والے اداروں اور یہاں تک کہ این جی اوز میں بھی شامل ہے۔ جب ان اداروں میں بدعنوانی زور پکڑتی ہے تو اس سے ان کے بنیادی مقصد کو نقصان پہنچتا ہے اور عوام کا اعتماد ختم ہو جاتا ہے۔

پاکستان میں، تعلیمی اداروں میں رشوت ستانی، صحت عامہ کے اداروں میں فنڈز کا غلط استعمال اور این جی اوز میں وسائل کی منتقلی کے ساتھ اداروں میں بدعنوانی ایک مستقل چیلنج رہا ہے۔ اس طرح کے عمل انسانی سرمائے کی ترقی میں رکاوٹ بنتے ہیں، صحت عامہ کو خطرے میں ڈالتے ہیں، اور غیر منافع بخش تنظیموں کی ساکھ کو نقصان پہنچاتے ہیں۔

سماجی اور سیاسی اقدار پر بدعنوانی کے اثرات:۔

گورننس میں بدعنوانی سماجی اور سیاسی اقدار کے نظام پر نقصان دہ اثرات مرتب کرتی ہے۔ یہ اداروں پر عوامی اعتماد کو ختم کرتا ہےاور بے حسی کو جنم دیتا ہے ۔ بدعنوانی انصاف اور مساوات کے اصولوں کو کمزور کرتی ہے، سماجی عدم مساوات کو برقرار رکھتی ہے اور سماجی ترقی کی راہ میں رکاوٹ بنتی ہے۔

پاکستان میں، بدعنوانی نے سماجی ہم آہنگی میں کمی، جمہوری اداروں کے کمزور ہونے، اور عوام میں مایوسی کے وسیع احساس میں اہم کردار ادا کیا ہے۔بدعنوانی نے سماجی عدم مساوات کو بڑھا دیا ہے، غربت کو دوام بخشا ہے، اور اقتصادی ترقی میں رکاوٹ پیدا کی ہے۔

گورننس میں کرپشن پر قابو پانا:۔

بدعنوانی کا مقابلہ کرنے کے لیے ایک کثیر جہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے جو بنیادی وجوہات کو حل کرے اور جوابدہی کے طریقہ کار کو مضبوط کرے۔ مؤثر انسداد بدعنوانی  میں مندرجہ ذیل اقدامات شامل ہونے چاہییں:۔

شفافیت اور احتساب کو فروغ دینا: حکومتی عمل، مالیاتی لین دین، اور فیصلہ سازی میں شفافیت میں اضافہ بدعنوانی کو روک سکتا ہے اور عوامی نگرانی کو بڑھا سکتا ہے۔

اداروں کو مضبوط کرنا: بدعنوانی کے مقدمات کی تحقیقات اور قانونی چارہ جوئی کے لیے خود مختار اور اچھے وسائل سے مالا مال اینٹی کرپشن ایجنسیاں ضروری ہیں۔

وِسل بلورز کا تحفظ: بدعنوانی کو بے نقاب کرنے والے سیٹی بلورز کو فعال اور تحفظ فراہم کرنا غلط کاموں کو روکنے اور احتساب کو فروغ دینے کے لیے بہت ضروری ہے۔

عوامی بیداری اور تعلیم: بدعنوانی کے نقصان دہ اثرات کے بارے میں عوامی بیداری کو بڑھانا اور شہریوں کو اس سے نمٹنے میں ان کے کردار کے بارے میں آگاہی دینا دیانتداری اور جوابدہی کے کلچر کو فروغ دے سکتا ہے۔

بین الاقوامی تعاون: بین الاقوامی تنظیموں اور دیگر اقوام کے ساتھ تعاون بہترین طریقوں کے تبادلے، اثاثوں کی بازیابی، اور سرحد پار کی تحقیقات میں سہولت فراہم کر سکتا ہے۔

پاکستان کے گورننس سسٹم میں بدعنوانی پر قابو پانے کے لیے ایک جامع نقطہ نظر کی ضرورت ہے جس میں قانون سازی، انتظامی اور عدالتی اقدامات شامل ہوں۔ یہاں ان اہم اقدامات کا خاکہ ہے جن پر عمل درآمد کیا جا سکتا ہے:۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

قانون سازی کے اقدامات

انسداد بدعنوانی کے قوانین کو مضبوط بنائیں: جرائم کے دائرہ کار کو وسیع کر کے، سزاؤں میں اضافہ کر کے، اور سیٹی بلورز کے لیے مضبوط تحفظ فراہم کر کے موجودہ انسداد بدعنوانی کے قوانین کی تاثیر میں اضافہ کریں۔

شفافیت کو فروغ دیں: قانون سازی کریں جو سرکاری بجٹ، معاہدوں، اور سرکاری عہدیداروں کے اثاثوں کے اعلانات کے عوامی انکشاف کو لازمی قرار دے۔

مالیاتی نگرانی کو بڑھانا: سرکاری فنڈز اور مالیاتی لین دین کی مناسب آڈٹ اور جانچ کو یقینی بنانے کے لیے آڈیٹر جنرل اور دیگر نگران اداروں کے کردار کو مضبوط بنائیں۔

مفاد عامہ کا تحفظ کریں: ایسے قوانین وضع کریں جو مفادات کے تصادم، اقربا پروری اور عوامی عہدیداروں کے ذریعے اختیارات کے ناجائز استعمال کو روکیں۔

انتظامی اقدامات

انسداد بدعنوانی کے ادارے قائم کریں: بدعنوانی کے خلاف تحقیقات کرنے، ان کے خلاف قانونی کارروائی کرنے اور ان کی منظوری کے اختیارات کے ساتھ خودمختار اور اچھے وسائل سے مالا مال اینٹی کرپشن ایجنسیاں بنائیں۔

میرٹ کو فروغ دیں: جانبداری اور اقربا پروری کو روکنے کے لیے سول سروس میں میرٹ کی بنیاد پر بھرتی اور پروموشن سسٹم نافذ کریں۔

سٹریم لائن پروسیس: بدعنوانی اور صوابدیدی فیصلہ سازی کے مواقع کو کم کرنے کے لیے انتظامی طریقہ کار اور ضوابط کو آسان بنائیں۔

پبلک سروس ڈیلیوری کو بہتر بنائیں: رشوت کی ضرورت کو کم کرنے کے لیے پبلک سروس ڈیلیوری کی کارکردگی اور شفافیت کو بہتر بنائیں۔

عوامی شرکت کو فروغ دیں: عوامی سماعتوں، فیڈ بیک میکانزم، اور آگاہی مہموں کے ذریعے انسداد بدعنوانی کی کوششوں میں شہریوں کی شرکت کی حوصلہ افزائی کریں۔

عدالتی اقدامات

عدلیہ کی آزادی کو یقینی بنائیں: بدعنوانی کے مقدمات کی غیر جانبدارانہ اور موثر کارروائی کو یقینی بنانے کے لیے عدلیہ کی آزادی کی حفاظت کریں۔

عدالتی طریقہ کار میں اصلاحات: بدعنوانی کے مقدمات کو تیز کرنے اور ملزمان کے حق میں تاخیر کو روکنے کے لیے عدالتی عمل کو ہموار کریں۔

عدالتی صلاحیت میں اضافہ کریں: انسداد بدعنوانی کے مقدمات میں مہارت رکھنے والے ججوں اور پراسکیوٹرز کو مناسب تربیت اور وسائل فراہم کریں۔

گواہوں کے تحفظ کو مضبوط بنائیں: بدعنوانی کے مقدمات میں گواہوں کو دھمکیوں اور انتقامی کارروائیوں سے بچانے کے لیے اقدامات کو نافذ کریں۔

عدالتی احتساب کو فروغ دیں: بدعنوانی کے لیے ججوں کو جوابدہ ٹھہرانے کے لیے میکانزم قائم کریں۔

ان مخصوص اقدامات کے علاوہ، حکومت کے اندر دیانتداری اور شفافیت کے مضبوط کلچر کو فروغ دینا بہت ضروری ہے۔ یہ عوامی عہدیداروں کی اخلاقی تربیت، کارکردگی کی باقاعدہ جانچ، اور تمام سطحوں پر اعلیٰ ترین معیارات کو برقرار رکھنے کے عزم کے ذریعے حاصل کیا جا سکتا ہے۔

گورننس میں بدعنوانی ایک پیچیدہ اور کثیر جہتی چیلنج ہے جس سے نمٹنے کے لیے مستقل اور مربوط کوششوں کی ضرورت ہے۔ شفافیت، احتساب اور قانون کی حکمرانی کو فروغ دے کر، پاکستان اپنے تمام شہریوں کے لیے ایک زیادہ منصفانہ، مساوی، اور خوشحال معاشرہ تشکیل دے سکتا ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1