Premium Content

Add

پاکستان میں سیاسی جماعتوں کے لیے منشور کی اہمیت

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: طاہر مقصود

سیاسی جماعت کا منشور ایک دستاویز ہے جو پارٹی کے وژن، اہداف، پالیسیوں اور ملک کے لیے منصوبوں کا خاکہ پیش کرتی ہے۔ یہ ووٹروں کو یہ بتانے کا ایک طریقہ ہے کہ پارٹی کس کے لیے کھڑی ہے اور اگر وہ الیکشن میں کامیابی حاصل کرتی ہے تو وہ کیا کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ ایک منشور ایک سیاسی جماعت، جمہوریت اور عوام کے لیے کئی وجوہات کی بنا پر ضروری ہوتا ہے، کیونکہ یہ پارٹی کو اپنی شناخت، نظریے اور ایجنڈے کی وضاحت کرنے اور خود کو دوسری جماعتوں سے ممتاز کرنے میں مدد کرتا ہے۔ یہ ووٹروں کو پارٹی کے وعدوں اور تجاویز کی بنیاد پر باخبر انتخاب کرنے اور پارٹی کو اس کی کارکردگی کے لیے جوابدہ ٹھہرانے کی اجازت دیتا ہے۔ یہ مختلف جماعتوں اور شہریوں کے درمیان بحث، مسابقت اور شرکت کو فروغ دے کر جمہوریت کو مؤثر طریقے سے کام کرنے میں بھی مدد کرتا ہے۔ یہ لوگوں کو پارٹی کی پالیسیوں اور پروگراموں سے فائدہ اٹھانے کی بھی اجازت دیتا ہے جن کا مقصد ان کی زندگیوں کو بہتر بنانا اور ان کے مسائل کو حل کرنا ہے۔

تاہم، ایک منشور میں کچھ حدود اور چیلنجز بھی ہوتے ہیں جن پر غور کرنے کی ضرورت ہوتی ہے، کیونکہ یہ پارٹی کی پالیسیوں اور منصوبوں کی حقیقت اورپائیداری کی عکاسی نہیں کرسکتا اور اس میں غیر حقیقی یا مبہم وعدے ہوسکتے ہیں جن پر عمل درآمد یا پیمائش مشکل ہے۔ یہ ملک اور عوام کے کچھ مسائل اور ضروریات کو حل کر سکتا ہے اور کچھ اہم شعبوں یا گروہوں کو نظر انداز کر سکتا ہے۔ مزید برآں، ہو سکتا ہے کہ یہ پارٹی کے اعمال اور رویے سے مطابقت نہ رکھتا ہو اور پارٹی کے لیڈروں یا اراکین کی طرف سے اس کی خلاف ورزی ہو سکتی ہے۔ یہ تمام ووٹرز کے لیے قابل رسائی یا قابل فہم نہیں ہو سکتا ہے اور پارٹی کے مفادات سے متاثر ہو سکتا ہے۔

پاکستان کے سیاسی نظام میں سیاسی منشور کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے ہوتا ہے کہ 2023 میں ہونے والے آئندہ عام انتخابات کے لیے بیشتر بڑی جماعتوں نے اپنے منشور شائع کر دیے ہیں۔تاہم پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس کے ایک حالیہ تجزیے کے مطابق، تین سرکردہ جماعتوں پاکستان مسلم لیگ ۔ن، پیپلز پارٹی اور پاکستان تحریک انصاف کے منشور نے پاکستان کے 20 فیصد سے بھی کم معاشی اور پالیسی مسائل کو حل کیا ہے۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ فریقین نے ملک اور عوام کو درپیش اہم چیلنجز اور مواقع پر خاطر خواہ توجہ اور ترجیح نہیں دی ہے۔ مزید برآں، پارٹیوں کے منشور پاکستان کے معاشرے اور ثقافت کے تنوع اور پیچیدگی کی عکاسی نہیں کر سکتے اور مختلف خطوں اور برادریوں کی ضروریات اور خواہشات کو پورا نہیں کر سکتے۔ اس لیے فریقین کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ اپنے منشور کے معیار اور مواد کو بہتر بنائیں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ وہ شواہد، تحقیق اور مشاورت پر مبنی ہوں۔ ووٹروں کے لیے یہ بھی ضروری ہے کہ وہ پارٹیوں کے منشور کا تنقیدی جائزہ لیں اور ان کا اپنی توقعات اور ترجیحات سے موازنہ کریں۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

پاکستانی سیاست میں منشور کی سیاسی، انتظامی، انتخابی، اقتصادی اور ثقافتی اہمیت ہے، جیسا کہ نیچے بتایا گیا ہے:۔

سیاسی اہمیت: منشور پارٹی کے سیاسی نظریے، ایجنڈے اور شناخت کی عکاسی کرتا ہے۔ اس سے پارٹی کو سیاسی میدان میں خود کو پوزیشن دینے اور دوسری جماعتوں سے الگ کرنے میں مدد ملتی ہے۔ اس سے پارٹی کو اپنے سیاسی نظریات اور اقدار کا اشتراک کرنے والے حامیوں، اتحادیوں اور عطیہ دہندگان کو راغب کرنے اور متحرک کرنے میں بھی مدد ملتی ہے۔ منشور مختلف مسائل اور پالیسیوں پر بیداری اور رائے عامہ پیدا کرکے ملک میں سیاسی گفتگو اور بحث کو بھی متاثر کرسکتا ہے۔

انتظامی اہمیت: منشور پارٹی کی حکمرانی اور انتظامیہ کے لیے ایک روڈ میپ اور ایک فریم ورک فراہم کرتا ہے۔ اس سے پارٹی کو ترجیحات طے کرنے، وسائل مختص کرنے، اور پالیسیوں اور پروگراموں کو نافذ کرنے میں مدد ملتی ہے جو اس کے منشور کے مطابق ہوں۔ یہ پارٹی کو اس کی کارکردگی اور کامیابیوں کی نگرانی اور جائزہ لینے اور عوام اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کو رپورٹ اور حساب دینے میں بھی مدد کرتا ہے۔ منشور پارٹی کے وعدوں اور تجاویز کو پورا کرنے کے عزم اور صلاحیت کا مظاہرہ کرتے ہوئے پارٹی کی ساکھ اور قانونی حیثیت کو بھی بڑھا سکتا ہے۔

انتخابی اہمیت: منشور پارٹی کی انتخابی مہم اور حکمت عملی کا کلیدی ذریعہ ہے۔ اس سے پارٹی کو ملک کے لیے اس کے وژن اور منصوبوں کے بارے میں رائے دہندگان کو بات چیت کرنے اور قائل کرنے میں مدد ملتی ہے اور انہیں پارٹی کو ووٹ دینے کے لیے راضی کرنے میں مدد ملتی ہے۔ اس سے پارٹی کو دیگر پارٹیوں کا مقابلہ کرنے اور ان کے منشور پر چیلنج کرنے اور ان کی کمزوریوں اور خامیوں کو بے نقاب کرنے میں بھی مدد ملتی ہے۔ منشور ووٹروں کی ترجیحات اور انتخاب کو متاثر کر کے انتخابی نتائج کو بھی متاثر کر سکتا ہے۔

معاشی اہمیت: منشور پارٹی کے معاشی فلسفے، مقاصد اور پالیسیوں کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ پارٹی کو ملک اور عوام کو درپیش معاشی چیلنجوں اور مواقع سے نمٹنے میں مدد کرتا ہے اور ایسے حل اور اصلاحات تجویز کرتا ہے جو اس کے منشور کے مطابق ہوں۔ یہ پارٹی کو اپنے حلقوں اور حامیوں کے معاشی مفادات اور حقوق کو فروغ دینے اور تحفظ دینے اور مختلف شعبوں اور گروہوں کی معاشی ضروریات اور مطالبات کو متوازن اور ہم آہنگ کرنے میں بھی مدد کرتا ہے۔ منشور معاشی ماحول اور حالات کو تشکیل دے کر ملک کی اقتصادی ترقی اور نمو کو بھی متاثر کر سکتا ہے۔

ثقافتی اہمیت: منشور پارٹی کی ثقافتی اقدار، عقائد اور اصولوں کی عکاسی کرتا ہے۔ اس سے پارٹی کو ملک اور عوام کے ثقافتی تنوع اور خوشحالی کا احترام کرنے میں مدد ملتی ہے اور ایسی پالیسیاں اور پروگرام تجویز کرنے میں مدد ملتی ہے جو ثقافتی سیاق و سباق اور حقائق کے لیے حساس اور جوابدہ ہوں۔ یہ پارٹی کو قوم کی ثقافتی شناخت اور اتحاد کو فروغ دینے اور مضبوط کرنے اور ملک کے ثقافتی ورثے اور میراث کو فروغ دینے اور اس کا دفاع کرنے میں بھی مدد کرتا ہے۔ منشور لوگوں کے ثقافتی رویوں اور طرز عمل کو متاثر کر کے ثقافتی تبدیلی اور معاشرے کی تبدیلی کو بھی متاثر کر سکتا ہے۔

منشور کی روح کو عملی جامہ پہنانے کے لیے کچھ سفارشات مندرجہ ذیل ہو سکتی ہیں:۔

پارٹی کو اپنے منشور کی تشکیل اور نظرثانی میں اپنے اراکین، حامیوں، ماہرین اور اسٹیک ہولڈرز سے مشورہ کرنا چاہیے اور اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ یہ نمائندہ، متعلقہ اور حقیقت پسندانہ ہو۔ مزید برآں، پارٹی کو مختلف ذرائع ابلاغ اور پلیٹ فارمز کا استعمال کرتے ہوئے اپنے منشور کو وسیع پیمانے پر اور مؤثر طریقے سے پھیلانا اور اس کی تشہیر کرنی چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ وہ زیادہ سے زیادہ ووٹرز اور شہریوں تک پہنچ سکے اور اس میں مشغول رہے۔

پارٹی کو اپنے لیڈروں، امیدواروں اور کارکنوں کو اپنے منشور کے بارے میں تعلیم اور تربیت دینی چاہیے تاکہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ وہ اسے واضح اور مستقل طور پر سمجھیں اور بات چیت کریں اور کسی قسم کی الجھن یا تضاد سے بچیں۔

پارٹی کو اپنے منشور پر عمل کرنا چاہیے اور اس پر عمل کرنا چاہیے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ وہ اپنے وعدوں اور تجاویز کو عملی جامہ پہنائے اور ان پر عمل درآمد کرے اور کسی بھی انحراف یا خلاف ورزی سے بچ سکے۔ پارٹی کو اپنے منشور کا باقاعدگی سے جائزہ لینا اور اپ ڈیٹ کرنا چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ یہ ملک اور عوام کی بدلتی ہوئی ضروریات اور امنگوں کی عکاسی کرتا ہے اور ان کا جواب دیتا ہے اور کسی بھی رائے یا سیکھنے کو شامل کرتا ہے۔

اس لیے سیاسی جماعتوں کو چاہیے کہ وہ سیاسی منشور کو عام کریں تاکہ لوگ اپنی سیاسی ترجیحات کا اندازہ لگا سکیں۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1