Premium Content

Add

شیخ حسینہ: جمہوریت سے آمرانہ حکمرانی تک کا سفر؟

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: حفیظ احمد خان

بنگلہ دیش کے حالیہ انتخابات، بائیکاٹ اور کم ٹرن آؤٹ کی وجہ سے متاثر ہوئے۔ یہ انتخابات ایک ایسے رہنما کی پیچیدہ تصویر پیش کرتے ہیں جس نے کبھی جمہوریت کے لیے جدوجہد کی تھی لیکن اب اسے جمہوریت کو ختم کرنے کے الزام کا سامنا ہے۔ یہ مضمون شیخ حسینہ کے سیاسی سفر میں اس کی کامیابیوں، انسانی حقوق کے تحفظات اور ان کے دور حکومت میں بنگلہ دیشی جمہوریت کی حالت کا جائزہ لے رہا ہے۔

فریڈم فائٹر سے وزیر اعظم تک:۔

حسینہ کی سیاسی جڑیں بنگلہ دیش کی آزادی کی جدوجہد میں پیوست ہیں۔ ایک فوجی بغاوت کے دوران اپنے خاندان کے قتل کا مشاہدہ کرنے کے بعد، انہوں نے  جلاوطنی سے واپس آکر فوجی حکومت کو چیلنج کرنے میں خالدہ ضیاء کے ساتھ ہاتھ ملایا۔ تاہم، یہ اتحاد ٹوٹ گیا، جس کی وجہ سے دونوں خواتین کے درمیان کئی دہائیوں کی تلخ دشمنی رہی۔ قید اور انتخابی شکستوں کی مدت کے بعد، حسینہ بالآخر 2009 میں وزارت عظمیٰ پر فائز ہوئیں، جس نے اپنے طویل دور حکومت کا آغاز کیا۔

اقتصادی عروج اور بین الاقوامی تعریف:۔

حسینہ کے دور میں ناقابل تردید معاشی ترقی ہوئی ہے۔ بنگلہ دیش، جو کبھی دنیا کی غریب ترین قوموں میں سے ایک تھا، نے ایک قابل ذکر عروج کا تجربہ کیا ہے۔ بنگلہ دیش نےکپڑے کی صنعت میں ترقی کی ہے اور خواتین افرادی قوت میں اضافہ ہوا ہے۔ غربت کی شرح میں کمی آئی ہے، بجلی تک رسائی میں اضافہ ہوا ہے، اور فی کس آمدنی ہندوستان سے آگے نکل گئی ہے۔ مزید برآں، حسینہ کی روہنگیا پناہ گزینوں کے بحران سے نمٹنے اور انتہا پسند گروپوں کے خلاف کریک ڈاؤن نے بین الاقوامی توجہ حاصل کی۔

شیڈو لومز:۔

ان کامیابیوں کے باوجود، حسینہ کی حکمرانی انسانی حقوق کے خدشات کی بڑھتی ہوئی فہرست سے داغدار ہوئی ہے۔ حزب اختلاف کی شخصیات کی بڑے پیمانے پر گرفتاریاں، جبری گمشدگیاں، ماورائے عدالت قتل، اور اختلاف رائے کو دبانا ایک ایسے رہنما کی تشویشناک تصویر پیش کرتا ہے جو حزب اختلاف کے خلاف عدم برداشت کا شکار ہو رہا ہے۔ حالیہ انتخابات، جس کا مرکزی حزب اختلاف نے بائیکاٹ کیا تھا اور تشدد سے نشان زد کیا گیا تھا، بنگلہ دیش میں سیاسی آزادی کی حالت پر مزید سوالات اٹھاتا ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

جمہوریت اور میراث پر تحفظات:۔

ناقدین کا استدلال ہے کہ حسینہ کی طاقت کا استحکام، مقبول مینڈیٹ کے بجائے جبر سے ہوا، ایک مجازی یک جماعتی حکمرانی ہے۔ عدلیہ اور آزاد میڈیا پر اس کا کریک ڈاؤن جمہوری اداروں کو مزید کمزور کرتا ہے۔ اگرچہ حامی اس کی معاشی کامیابی کی تعریف کرتے ہیں، لیکن وہ بنیادی حقوق کا استحصال کرنے میں ملوث ہے اور سیاسی حریفوں  کے خلاف کاروائیوں میں ملوث ہے۔

چیلنجز اور غیر یقینی صورتحال کا سامنا:۔

حسینہ کا اگلا دور چیلنجوں سے بھرا ہو گا، جس میں بڑھتی ہوئی مہنگائی، معاشی سست روی اور انسانی حقوق پر بین الاقوامی جانچ شامل ہے۔ جمہوری اصولوں کو برقرار رکھتے ہوئے ان مسائل کو حل کرنے کی ان کی صلاحیت دیکھنا باقی ہے۔ اس نے جو وراثت چھوڑی ہے اس کا انحصار اس بات پر ہوگا کہ آیا وہ شمولیت اور شفافیت کو اپنانے کا انتخاب کرتی ہے یا آمریت کی راہ پر گامزن رہتی ہے۔

نتیجہ:۔

شیخ حسینہ کی کہانی تضادات میں سے ایک ہے۔ کبھی جمہوریت کی علامت تھی، اب حسینہ کو جمہوریت کو کمزور کرنے کے الزام کاسامنا ہے۔ اگرچہ اس کی معاشی کامیابیاں ناقابل تردید ہیں، لیکن وہ اس کی حکمرانی کے تاریک پہلو کو چھپانہیں سکتیں۔ بنگلہ دیش کا مستقبل اس بات پر منحصر ہے کہ آیا وہ اقتدار پر اپنی گرفت کو مزید مضبوط کرنے کا انتخاب کرتی ہے یا پھر جمہوریت کی بحالی کے لیے کام کرتی ہے۔ وقت ہی بتائے گا کہ انہیں خوشحالی کی معمار کے طور پر یاد رکھا جائے گا یا  پھر جمہوریت کو تباہ کرنے والی شخصیت کے طور پر جانا جائے گا۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1