Premium Content

Add

بلاگ تلاش کریں۔

مشورہ

سندھ میں وفاقی پی اے ایس افسران کی کرپشن عروج پر۔۔۔۔۔

Contract awarding is a way of smart corruption
Print Friendly, PDF & Email

سندھ میں کرپشن کے واقعات سامنے آتے رہتے ہیں اور اس بار یہ وفاقی پی اے ایس افسران ہیں جو سندھ کے سرکاری خزانے کو لوٹ رہے ہیں۔ سندھ میں وفاقی پی اے ایس افسران کی کرپشن عروج پر ہے۔ بدعنوانی کے واقعات تسلسل کے ساتھ منظر عام پر آ رہے ہیں۔ یہ صورتحال کی سنگینی کو اجاگر کرتا ہے۔ ابھرنے والے یہ واقعات عوام کی کرپشن کے روایتی گھر کو نئی شکل دے رہے ہیں کیونکہ وفاقی پی اے ایس افسران کروڑوں نہیں بلکہ اربوں روپے لوٹ رہے ہیں۔ یہ پاکستان میں انتظامیہ میں بدعنوانی کی سطح کو بھی ثابت کرتا ہے۔

قبل ازیں، حیدر آباد میں انسداد بدعنوانی کی ایک عدالت نے جمعرات کو مٹیاری کے سابق ڈپٹی کمشنر عدنان رشید کو ایم 6 حیدرآباد -سکھر موٹروے کے لیے زمین کے حصول کے مالیاتی کرپشن کی تحقیقات کے سلسلے میں 7 دسمبر تک جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج

Read More: https://republicpolicy.com/federal-pas-officers-continue-to-plunder-the-province-of-sindh/

اینٹی کرپشن  نے 17 نومبر کو عدنان کو گرفتار کیا۔ سعید آباد کے سابق اسسٹنٹ کمشنر منصور عباسی بھی اس کرپشن میں ملوث ہیں۔

کیس کی تفصیلات بتاتی ہیں کہ حیدرآباد سکھر ایم 6 موٹر وے کے لیے زمین کے حصول کی آڑ میں اوپن بیئرر چیک کے ذریعے سندھ بینک کی سعید آباد برانچ سے 2.14 بلین روپے سے زائد رقم نکلوائی گئی۔ تاہم، ملزمان نے رقم نکلوانے سے پہلے کسی طریقہ کار کے تقاضے پورے نہیں کیے تھے۔ اے سی ای نے ملزم کے مزید ریمانڈ کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ ریمانڈ شواہد کی وصولی کے لیے اہم ہے۔

اس کے بعد، عدالت نے درخواست مسترد کر دی، یہ کہتے ہوئے کہ اینٹی کرپشن کے پاس عدنان کا ریمانڈ حاصل کرنے کے لیے کافی شواہد نہیں ہیں۔ رشید کو چھ روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر حیدرآباد کی نارا جیل بھیج دیا گیا۔

اس ہفتے کے شروع میں، عدالت نے اس مقدمے میں عباسی اور سندھ بینک کے ایریا منیجر تابش شاہ کی ضمانت قبل از گرفتاری مسترد کر دی تھی۔

Read More: https://republicpolicy.com/another-federal-pas-officer-plunders-the-province-of-sindh/

عدنان کی فراہم کردہ معلومات پر، اینٹی کرپشن نے اسسٹنٹ کمشنر کی سرکاری رہائش گاہ سے 420 ملین روپے برآمد کیے، جو ان کے دفتر میں اوپر واقع تھی۔ بازیابی کا انکشاف پراسیکیوٹر مظہر علی سیال نے عدالت میں کیا۔

اس سال 17 اکتوبر سے 11 نومبر کے درمیان 2.14 بلین روپے کی رقم نکلوائی گئی، حالانکہ ایم 6 موٹر وے منصوبے کے لیے زمین کے حصول کے لیے فنڈز نیشنل ہائی وے اتھارٹی  نے 2018 میں منتقل کیے تھے۔

اس سے قبل سندھ حکومت نے دو رکنی حقائق جانچنے والی ٹیم تشکیل دی تھی جس نے سندھ بینک سے فراڈ اور غیر قانونی طور پر رقوم نکلوانے کی تفصیلات درج کی تھیں۔ نتائج کے مطابق، 2.14 بلین روپے نکالے گئے۔ بعد میں، نقد رقم میں مزید رقوم نکلوائی گئیں، جس سے رقم بڑھ کر 2.3 ارب روپے ہوگئی۔

سابق سعید آباد اے سی نے یہ رقم ان زمینداروں کو ادائیگی کی ادائیگی کے لیے واپس لے لی جن کی زمینیں حصول اراضی ایکٹ 1894 کے تحت ایم 6 حیدرآباد سکھر موٹروے کی تعمیر کے لیے حاصل کی جانی تھیں۔

حیرت کی بات یہ ہے کہ متعلقہ لینڈ ایکوزیشن آفیسر کی جانب سے 1894 کے سیکشن 11 کے تحت لینڈ ایکوزیشن ایوارڈ کی منظوری کے بغیر بھی 2.3بلین روپے کی رقم نکال کر لوگوں میں تقسیم کر دی گئی۔

وفاقی پی ایس  افسران صوبوں میں کسی صوبے کے معاملات سے منسلک پوسٹوں پر تعینات ہوتے ہیں۔ وہ صوبائی انتظامیہ کو جوابدہ نہیں کیونکہ وہ وفاقی ملازم ہیں۔کابینہ ڈویژن اسلام آباد ان افسران کی شرائط و ضوابط طے کرتا ہے۔ برسوں کے دوران، ایسے واقعات  رپورٹ ہوئے ہیں جہاں وفاقی افسران مبینہ بدعنوانی میں ملوث پائے جاتے ہیں۔ اب یہ سندھ حکومت کا امتحان ہے کہ وہ وفاقی افسران کو کیسے جوابدہ ٹھہراتے ہیں۔

https://www.transparency.org/en/what-is-corruption

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1