Premium Content

Add

سپریم کورٹ آف پاکستان کا تاریخی فیصلہ

Print Friendly, PDF & Email

سپریم کورٹ آف پاکستان نے ایک تاریخی فیصلہ جاری کرتے ہوئے سرکاری ملازمین کے لیے ”صاحب“ کی اصطلاح کے استعمال پر پابندی لگا دی ہے۔ یہ فیصلہ پبلک سیکٹر کے اندر غیر ضروری حیثیت کی بلندی سے بچنے کی اہمیت پر ایک وسیع تر موقف کی علامت ہے۔ عدالت عظمیٰ نے اس کی حرکیات کو از سر نو تشکیل دینے کی طرف ایک فیصلہ کن قدم اٹھایا کہ سرکاری ملازمین کو کس طرح مخاطب کیا جاتا ہے اور توسیع کے ذریعہ، وہ اپنے کردار کو کس طرح سمجھتے ہیں۔

پشاور میں ایک بچے کے قتل کیس سے متعلق ضمانت کی درخواست سے پیدا ہونے والے تحریری حکم نامے میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ ملازمت کے عنوانات میں لفظ ”صاحب“ شامل کرنے کا رواج ختم کیا جائے۔ عدالت کا مؤقف ہے کہ اس طرح کا اضافہ غیر ضروری طور پر سرکاری ملازمین کی حیثیت کو بلند کرتا ہے، ممکنہ طور پر شان و شوکت اور غیر احتسابی کے احساس کو فروغ دیتا ہے۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

چیف جسٹس قاضی فائزنے اپنے تحریری حکم نامے میں سرکاری ملازمین کی ذہنیت پر اعزازات کے ممکنہ اثرات کے بارے میں ایک اہم نکتہ اٹھایا۔ عدالت کا فیصلہ اس گہری تشویش کی عکاسی کرتا ہے کہ یہ عنوانات ایک ایسے ماحول میں حصہ ڈال سکتے ہیں جہاں سرکاری ملازمین خود کو جانچ پڑتال سے بالاتر سمجھیں، احتساب سے الگ ہوں جو عوام کی مؤثر طریقے سے خدمت کرنے میں اہم ہے۔

صاحب کے استعمال پر یہ پابندی اس اصول سے مطابقت رکھتی ہے کہ سرکاری ملازمین کو عوامی مفادات کے لیے وقف جوابدہ افراد کے طور پر دیکھا جانا چاہیے۔ عدالت، اپنی دانشمندی میں، درجہ بندی کے عنوانات سے وابستہ ممکنہ نقصانات کو تسلیم کرتی ہے جو عوام اور خدمت کرنے والوں کے درمیان تفریق پیدا کر سکتے ہیں۔ اس کے بجائے، عوامی خدمت کے بنیادی مقصد پر زور دیتے ہوئے، زیادہ مساویانہ طرز عمل کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

یہ فیصلہ پبلک سیکٹر کے لیے ایک واضح پیغام کے طور پر کام کرتا ہے، شفافیت کو ترجیح دینے اور احتساب میں رکاوٹ بننے والے طریقوں کو ختم کرنے کی ضرورت کا اشارہ دیتا ہے۔ اعزازات کے استعمال کو چیلنج کرتے ہوئے جو اہمیت کے بڑھتے ہوئے احساس میں حصہ ڈال سکتے ہیں، سپریم کورٹ ایک زیادہ جوابدہ اور قابل رسائی عوامی خدمت کی راہ ہموار کر رہی ہے۔ یہ اقدام عوامی ملازمین اور ان شہریوں کے درمیان تعلقات کو نئے سرے سے متعین کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

AD-1