Premium Content

الیکشن کےآئینی معاملات پر ازخود نوٹس

Print Friendly, PDF & Email

موجودہ ہنگامہ خیز وقت کی عکاسی کرتے ہوئے، پیر کے روز، سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے کے پی اور پنجاب اسمبلیوں کی تحلیل سے پیدا ہونے والے آئینی سوالات اور 90 دن کے اندر انتخابات کرانے کے تقاضوں کے حل کے لیے ازخود نوٹس کی کارروائی دوبارہ شروع کی۔ اس سے پہلے کے نو رکنی بینچ کی تشکیل نو کرنی پڑتی چار ججوں نے خود کو کارروائی سے الگ کر دیا۔

پاکستان کے چیف جسٹس نے گزشتہ ہفتے سیاسی فضا میں اداروں کے درمیان تعطل کے بعد سماعت شروع کی تھی۔ صدر اور الیکشن کمیشن کے درمیان سرد خطوط کے تبادلے نے صورتحال کوسیاسی ماحول کو گرم کر  دیا تھا، جس کے نتیجے میں سابق صدر نے دونوں مقننہ کے لیے پولنگ کی تاریخوں کا اعلان کیا۔ چیف جسٹس آف پاکستان نے آئینی معاملات کو حل کرنے کے لیے ازخودنوٹس لے کر بینچ تشکیل دیا،لیکن عدالتی محاذ پربھی معاملات ہموار نہیں رہے۔پی ڈی ایم  اور پاکستان بار کونسل نے ازخود نوٹس کی کارروائی کی سماعت کرنے والے نو رکنی بینچ کی تشکیل پر سوال اٹھائے اور حکومت نے معاملے کی سماعت کے لیے فل کورٹ کو طلب کیا۔ حکومتی پارٹیوں نے بھی دو ججوں پر  اعتراض کر دیا۔مزید یہ کہ بینچ کے چار ججوں نے بینچ کی تشکیل کے بارے میں اپنے اضافی نوٹ کے ذریعے مختلف بنیادوں پر اعتراضات اٹھائے تھے۔ لہٰذا، مختلف اسٹیک ہولڈرز کے خدشات دور ہونے کے بجائے، تازہ ترین پیش رفت سے معاملات مزید پیچیدہ ہونے کا امکان ہے۔

اعلیٰ ترین عدالت کو سیاسی میدان سے بالاتر ہونا چاہیے اور اسے سیاسی جھگڑوں میں نہیں آنا چاہیے۔ موجودہ تعطل سے نمٹنے اور سپریم کورٹ کے وقار کو برقرار رکھنے کا ایک ممکنہ طریقہ یہ ہے کہ فل کورٹ اس اہم آئینی مقدمے کی سماعت کرے ۔

اس نظریے کو خود سپریم کورٹ کے کچھ ججوں سے تقویت ملتی ہے، جنہوں نے اس طرح کے اہم کیس کی سماعت کے لیے فل کورٹ کی ضرورت کی توثیق کی ہے۔ مزید برآں، تشکیل نو بینچ کے ایک جج نے پہلے کے بینچ میں برادر جج کی موجودگی پر سوالات اٹھائے تھے اور اسے ”نامناسب“ قرار دیا تھا۔

اگر یہ راستہ ممکن نہیں ہے، تو چیف جسٹس کے  سامنے دوسرا آپشن یہ ہو سکتا ہے کہ اس معاملے میں از خود کارروائی ختم کر دی جائے۔ سب کے بعد، ججوں میں سے ایک نے اپنے اضافی نوٹ میں تبصرہ کیا ہے کہ، زیر بحث کیس کے حوالے سے، ”سو موٹو ایکشن جائز نہیں ہے“۔ نتائج سے قطع نظر، آئینی تقاضوں کی پیروی کی جانی چاہیے اور اسے تعطل میں نہیں رکھا جانا چاہیے۔ اگر خیبرپختونخوا اور پنجاب کی نگراں انتظامیہ 90 دن کی ڈیڈ لائن کے اندر انتخابات کروانا نا ممکن محسوس کرتی ہے توحکومت کو قبل از وقت عام انتخابات کرانے پر غور کرنا چاہیے تاکہ اس آئینی تعطل سے باہر نکلا جا سکے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Latest Videos