Premium Content

الیکشن کے حوالے سے سپریم کورٹ کا ازخود نوٹس کا فیصلہ

Print Friendly, PDF & Email

خیبرپختونخوا اور پنجاب کی صوبائی اسمبلیوں کے آنے والے انتخابات کے بارے میں ابھی بھی کافی غیر یقینی صورتحال ہے، حالانکہ اس معاملے پر ازخود کارروائی شروع کرنے کے پیچھے سپریم کورٹ کا ارادہ اس کے بالکل برعکس نظر آتا ہے۔

عدالت نے ایک منقسم فیصلے کے ذریعے اس بات کا اعادہ کرنے کے لیے کہا ہے کہ انتخابات 90 دن کی مدت کے اندر ہونے چاہئیں، لیکن عدالت نے پھر بھی انتخابات کے لیے کوئی حتمی تاریخ نہیں دی۔

اہم بات یہ ہے کہ فیصلے میں واضح کیا گیا ہے کہ تحلیل شدہ صوبائی اسمبلی کے لیے انتخابات کی تاریخ کا اعلان مذکورہ صوبے کے گورنر کی آئینی ذمہ داری ہے اگر اسمبلی گورنر نے خود تحلیل کی ہو۔ بصورت دیگر، ایسا کرنا صدر کا استحقاق بن جاتا ہے۔

اس میں مزید زور دیا گیا ہے کہ انتخابات کی تاریخ کا اعلان ”جلدی اور بغیر کسی تاخیر کے اور کم سے کم وقت میں“ کیا جانا چاہیے، اور یہ کہ الیکشن کمیشن کو اس مقصد کے لیے ”فعال طریقے سے“ خود کو دستیاب کرنا چاہیے۔

صدر عارف علوی کے یکطرفہ اعلان کے بعد انتخابی تاریخوں کا اعلان کرنا کس کی ذمہ داری ہے، اس سوال پر وضاحت کی ضرورت تھی، لیکن ماضی میں نظر آتا ہے کہ سپریم کورٹ اس معاملے میں خود کو شامل کیے بغیر بھی ایسا کر سکتی تھی۔

اس کیس کی سماعت کے لیے اصل میں بینچ کی تشکیل کے بارے میں سوالات، تعصب اور ناانصافی کے الزامات، اور بینچ کے لیے نامزد کچھ ججوں کے سخت اعتراضات نے قومی بحران کے اس وقت میں عدلیہ کو نقصان پہنچایا۔

جسٹس منصور علی شاہ اور جسٹس جمال خان مندو خیل نے فیصلے پر اختلافی نوٹ لکھتے ہوئے کہا ہے کہ آئین میں انتخابات کے لیے 60 اور 90 دن کاوقت دیا گیا ہے، ہائیکورٹس میں اسی طرح کا کیس زیر سماعت ہے، سپریم کورٹ ہائی کورٹ میں زیر التوا معاملے پر ازخود نوٹس نہیں لے سکتی۔

اختلافی نوٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ منظورالہی اور بے نظیر کیس کے مطابق ازخود نوٹس لینا نہیں بنتا، لاہورہائیکورٹ پہلے ہی مقدمہ کا فیصلہ کرچکی ہے، از خود نوٹس لینے کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی، از خود نوٹس جلد بازی میں لیا گیا، ازخود نوٹس کا اختیار سپریم کورٹ کواستعمال نہیں کرنا چاہیے تھا۔

چیف جسٹس کے لیے فل کورٹ بینچ تشکیل دینے اور ان کے ازخود نوٹس کی وجہ سے پیدا ہونے والے تنازعہ کو مضبوطی سے ختم کرنے کا موقع تھالیکن  یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ موقع ہاتھ سے نکل گیا۔ موجودہ کیس کے ساتھ ایک اور متعلقہ سوال بھی حل ہو سکتا تھا: اسمبلی کب اور کن حالات میں تحلیل کی جائے؟

ایک معقول جواب سے عوام کے نمائندگی کے حق کو تقویت دینے میں بہت مدد ملتی، لیکن بدقسمتی سے معاملہ ایک طرف رہ گیا۔ چاہے جیسا بھی ہو، حکومت کے لیے اب ضروری ہے کہ وہ انتخابات میں تاخیر کی کوششیں بند کرے اور الیکشن کمیشن کو اپنی ذمہ داری نبھانے کے لیے آگے بڑھنے کے قابل بنائے۔

آئین ہمیشہ انتخابات کے انعقاد کے لیے 90 دن کی مہلت کے حوالے سے بالکل واضح تھا، چاہے سپریم کورٹ نے مداخلت کی ہو یا نہیں۔ پی ڈی ایم حکومت کسی نہ کسی بہانے انتخابی مشق کو روکنے کے لیے کوششیں کر رہی ہے۔

سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اس کے تاخیری حربے اسے عدلیہ کے ساتھ تصادم کے راستے پر ڈال دیں گے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Latest Videos