Premium Content

لاہور میں ٹریفک کے مسائل

Print Friendly, PDF & Email

https://twitter.com/NAVEEDDEERATH مصنف : چوہدری نوید دیرتھ

مصنف سول سرونٹ ہیں اورڈپٹی سیکرٹری، سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ ، پنجاب تعنیات ہیں۔

لاہور میں کئی وجوہات کی بنا پر ٹریفک کا نظام درہم برہم ہے۔ تاہم اس کی بنیادی وجہ شہر میں ناقص انتظامات ہیں ۔ دوسری اہم وجہ ایک فعال پبلک ٹرانسپورٹ سسٹم کی عدم دستیابی ہے۔ پھر، انتظامی اور انجینئرنگ کی ناکامیاں بھی ٹریفک مسائل کی وجوہات میں شامل ہیں۔ لوگوں کا دیہاتوں سے شہروں کی طرف ہجرت کرنا بھی اس مسئلے کو بد سے بدتر کی طرف لے کے جار رہا ہے۔ لاہور جیسے وسیع و عریض شہر کے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے انجینئرز، ایڈمنسٹریٹرز اور کنٹریکٹرز کی صلاحیتوں کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔

سڑک کی انجینئرنگ کی کمی ہی ٹریفک کی بھیڑ اور سڑک کے حادثات میں بنیادی کردار ادا کرنے والا عنصر ہے۔ ٹریفک حادثات کے دیگر اہم عوامل میں ڈرائیور کی تھکاوٹ، لاپرواہی سے گاڑی چلانا، تیز رفتاری، دھیان سے گاڑی نہ چلانا،بچوں کا گاڑیاں چلانا، لاپرواہی سے گاڑیاں چلانا، موٹر گاڑیوں کے ڈیزائن میں مقامی تبدیلی، سڑک کے جیومیٹرک ڈیزائن، ٹریفک سگنلز کی خلاف ورزی، دوران ڈرائیونگ منشیات کا استعمال اور موبائل فون کا استعمال شامل ہیں۔ افسوس کی بات یہ ہے کہ ریاستی مشینری کے مختلف محکموں کے کام میں ایک اندرونی خامی مزید پریشانی میں اضافہ کرتی ہے۔ مطلوبہ جگہوں پر مناسب یو ٹرن کی ضرورت روڈ انجینئرنگ کی ناکامی ہے۔ غیر معقول فاصلے پر مختلف یو ٹرن فراہم کیے جاتے ہیں، جو مسافر کو وقت اور ایندھن کی بچت کے لیے یک طرفہ اصول کی خلاف ورزی کرنے پر زور دیتے ہیں۔ ”سگنل فری کوریڈورز زون“ میں ایک مناسب ایگزٹ پلان کی کمی ہے،یہ ٹریفک پلاننگ اور انجینئرنگ کی ایک اہم ناکامی ہے۔ انجینئرنگ کی یہ ناکامی اس وجہ سے ہے کہ ایک جنرلسٹ بیوروکریسی ادارہ ایل ڈی اے اس کو کنٹرول کرتا ہے۔ اس کے لیے ایک فعال بلدیاتی نظام کی ضرورت ہے۔

مزید پڑھیں: https://republicpolicy.com/pakistan-k-shehron-ma-traffic-k-bharty/

بہت سے چوک پوائنٹس تیار کیے جاتے ہیں، جہاں تین یا چار لین ایک ہی لین میں شفٹ ہوتے ہیں۔ ٹھوکر نیاز بیگ، چوک یتیم خانہ، اور بھاٹی چوک سڑک کی ناقص انجینئرنگ کی چند مثالیں ہیں۔ ایک اور اہم عنصر چند اہم جگہوں  پر سروس روڈز کا غائب ہونا ہے، جو نہ صرف قریبی سوسائٹیوں یا ہاؤسنگ سکیموں میں رہائش پذیر سڑک استعمال کرنے والوں کے لیے پریشانیوں کا باعث بنتا ہے بلکہ بڑے پیمانے پر ٹریفک کی خرابی کا باعث بھی بنتا ہے۔ مختلف محکموں کے لیے سڑکوں کی قانونی ذمہ داری، منصوبہ بندی، پالیسی سازی اور عمل درآمد کافی بڑا چیلنج ہے۔ مختلف سرکاری اداروں کا دائرہ اختیار، اختیارات اور ذمہ داریوں کی قانونی تقسیم کے لیے اہم ہے۔ اگر انجینئرنگ اور قانونی رکاوٹوں کو دور کر دیا جائے تو ٹریفک زیادہ موثر انداز میں چل سکتی ہے۔ اس کے برعکس، مختلف سڑکوں کا بہتر انتظام کیا جا سکتا ہے، خاص طور پر دفتر اور اسکول کے اوقات میں۔

مسافروں اور پیدل چلنے والوں کے لیے مناسب تعلیم ہونی چاہیے، کیونکہ سڑک استعمال کرنے والوں میں ٹریفک کا شعور بہت کم  ہے۔ ٹرانسپورٹ ڈیپارٹمنٹ کو آگے بڑھنا چاہیے اور مسافروں میں بیداری پیدا کرنی چاہیے، اس کے بعد قانون پر سختی سے عمل درآمد کرانا چاہیے۔ ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کو سزائیں دینی چاہییں۔

گاڑیوں کی رفتار کو آہستہ اور ٹریفک جام کا باعث بننے والا ایک  اہم عنصر لاپرواہ پارکنگ ہے۔ لوگ لاپرواہی سے اپنی گاڑیاں بھیڑ والی سڑکوں کے کناروں پر پارک کرتے ہیں اس بات کا احساس کیے بغیر کہ ان کی گاڑیاں ٹریفک کی روانی کو روک سکتی ہیں، خاص طور پر اسکولوں، بازاروں اور دفاتر کے قریب۔ ایسے میں سڑک پر ہر کوئی ٹریفک وارڈنز کی ذمہ داری خود سنبھال کر اور صبر سے انتظار کرنے کی بجائے اپنی گاڑی کو غلط راستہ پر ڈال لیتا ہے، مخالف لین کو اپنا کر ٹریفک کے بہاؤ کو روک کر جام کو مزید خراب کر دیتا ہے ۔ٹریفک کے نظام کو درہم برہم کرنے کی دوسری وجہ وی آئی پی موومنٹ ہے۔ لاہور کی ٹریفک وی آئی پی موومنٹ کا بوجھ برداشت نہیں کر سکتی۔

مزید برآں، سڑکوں پر لوگوں کے رویے اور بہت سے دوسرے عوامل اس مسئلے میں معاون کے طور پر کردار ادا کرتے ہیں۔ سڑکوں پر گاڑیوں کی تعداد میں خطرناک حد تک اضافہ ظاہر کرتا ہے کہ شہر میں پبلک ٹرانسپورٹ کا کوئی فعال نظام نہیں ہے- موجودہ سڑکوں کو چوڑا کرنا، نئے فلائی اوور اور انڈر پاسز کی تعمیر اس مسئلے کو حل کرنے میں مددگار ثابت ہو سکتا ہے۔ تاہم، ٹریفک ریگولیشن کے ساختی حل اہم ہیں۔ اس کے باوجود کاروں اور دیگر گاڑیوں میں اضافہ اسے نگل رہا ہے۔ مسافروں اور پیدل چلنے والوں کے لیے کوئی مناسب ہدایات نہیں ہیں، اور سڑک استعمال کرنے والوں میں ٹریفک کا شعور نہیں ہے۔ زیبرا کراسنگ، فٹ پاتھ اور روڈ سگنلز کی عدم موجودگی ٹریفک کی روانی میں ایک اہم رکاوٹ ہے۔  جہاں فٹ پاتھ دستیاب ہیں وہاں دکانداروں اور موٹر سائیکل پارکنگ کے لیے غیر قانونی پارکنگ مافیا کا قبضہ ہے۔ طاقتور اور کرپٹ مافیا سڑکوں کو غیر قانونی پارکنگ کے لیے بھی استعمال کرتا ہے جبکہ ٹریفک پولیس خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ روزانہ، بہت سے واقعات رپورٹ ہوتے ہیں جہاں لوگ اور پارکنگ مافیا پارکنگ کے لیے سڑکوں پر غیر قانونی قبضے کے لیے لڑتے ہیں ۔

مزید پڑھیں: https://republicpolicy.com/traffic-issues-in-lahore-and-their-solutions/

لاہور بڑھتا جارہا ہے ،اور ٹریفک کا انتظام ایک سنگین مسئلہ بنتا جا رہا ہے، کیونکہ توسیع لاہور کے ماسٹر پلان کے مطابق نہیں ہے۔ اس کے بعد لاہور ہائی کورٹ نے شہر کا ماسٹر پلان 2050 معطل کر دیا۔ درخواست گزاروں نے منصوبہ کی ماحولیاتی اور توسیعی محرکات پر سخت سوالات اٹھائے ہیں۔ شیخوپورہ، قصور اور گوجرانوالہ سے بھی روزانہ مسافروں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے جس سے ٹریفک کے ہےنظام پر مزید دباؤ ہے۔ اس لیے سڑکوں پر ٹریفک کی بھیڑ کو کم کرنے کے لیے مناسب منصوبہ بندی، پالیسی ریگولیشن اور عمل درآمد بہت ضروری ہے۔

ٹریفک قوانین پر سختی سے عمل درآمد کے ساتھ لین میں ہموار بہاؤ، ٹریفک کے بہاؤ کو بڑھا سکتا ہے۔ قلیل مدتی، درمیانی مدت اور طویل مدتی منصوبے درکار ہیں۔ آخر میں، شہروں کو  وسیع و عریض جدید منصوبہ بندی اورقوانین پر عمل درآمد کی ضرورت ہے۔ یہاں تک کہ ایک اسلامی انتظامی حوالہ بھی ہے کہ اگر آبادیوں کی وجہ سے شہر غیر منظم ہوں تو وہ نئے شہر بنا کر رہ سکتے ہیں۔ اس لیے پنجاب کے دارالحکومت کو کسی اور شہر میں منتقل کرنا یا کوئی نیا شہر بنانا کوئی بری بات نہیں ہے۔ اس سے لاہور  شہر کے انتظامی اور غیر منظم مسائل سے نجات مل سکتی ہے۔

10 thoughts on “لاہور میں ٹریفک کے مسائل”

  1. آپ نے نے بہت جامع طریقے سے ٹریفک کے مسائل کی نشاندہی کی ہے ہے میرے خیال میں اس میں ایک عوامل انکروچمنٹ کا بھی ہے ہے

  2. بہترین نقطہ نظر۔ عوام الناس میں آگاہی سے اس مسئلہ پر قابو پایا جا سکتا ہے۔

  3. Thanks you have mentioned the causes, that’s great, but most of the causes are known by everyone, the main thin thing is solutions, I am expecting in the follow up column 😀

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Latest Videos