Premium Content

پاکستان کی بقا کے لیے سیاسی اصلاحات ناگزیر ہیں

Print Friendly, PDF & Email

مصنف: حفیظ اللہ خان خٹک

عصری پیچیدہ سیاسی میدان میں، سیاست نے دنیا میں زور پکڑا ہے۔ قومی ریاست کے ظہور کو سیاسی مقابلہ جات کا نتیجہ قرار دیا جاتا ہے۔ قومی ریاستوں کی طرف سے حاصل ہونے والی ترقی دراصل جامع سیاسی حکمت عملی کا نتیجہ ہوتی ہے۔ فی الحال، عالمگیریت اور تکنیکی ترقی کی پیچیدگیوں سے ہم آہنگ سیاسی اصولوں کے ذریعے ہی نمٹا جا سکتا ہے۔ سیاست کا کسی قوم کے سماجی و اقتصادی نظام پر واضح اثر پڑتا ہے کیونکہ یہ انسانی طرز عمل کی تدبیر میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ انہی وجوہات نے سیاست کی اہمیت کو بڑھایا ہے۔ اس وقت سیاست میں مستقبل کی منصوبہ بندی کے لیے ماضی کا تجزیہ کرنا ناگزیر ہے۔

بلاشبہ سیاست ملکی اور خارجی معاملات میں نمایاں کردار ادا کرتی ہے۔ سیاست کا دائرہ کار افراد کے حقوق اور فرائض سے لے کر ریاست تک ہے۔ کسی قوم کی ترقی اور خوشحالی کے مقصد کے لیے قدرتی اور انسانی وسائل کا استحصال اور انتظام سیاسی ثقافت پر منحصر ہے۔ اس حوالے سے پاکستان کو 1947 میں اپنے قیام کے بعد سے ہی سیاسی بحران کا سامنا رہا ہے۔ اس وقت پاکستان شدید آئینی، سیاسی، اقتصادی اور ادارہ جاتی بحرانوں سے گزر رہا ہے۔ لیکن ابھی تک، سیاست پاکستان میں سب سے زیادہ نظر انداز کیے جانے والے موضوع میں سے ایک ہے۔

ستم ظریفی یہ ہے کہ ملک کے اشرافیہ زیادہ سے زیادہ فوائد حاصل کرنے کے لیے جان بوجھ کر اسے مزید پیچیدہ بنا دیتے ہیں۔ ریاست کے مشکل ترین سماجی، معاشی اور سیاسی حالات سے بھی آگے، سیاسی پارٹیاں اپنی ذاتی رنجشوں میں مصروف ہیں۔ وہ ملک میں موجودہ بحرانوں کے حل کے لیے خاطر خواہ توجہ دینے سے گریزاں ہیں۔ وہ ہمیشہ عوام کے نام  پر مشکل وقت میں ذاتی فائدے کا موقع تلاش کرتے ہیں۔ کیا عوام کا وجود صرف ان کے مفاد کی  سیاست کے لیے ہے؟

اس کے باوجود عوام تبدیلی کی شدید خواہش رکھتے ہیں لیکن انہیں کھوکھلے نعروں سے دھوکہ دیا جاتا ہے۔ اس کی وجہ سیاسی اشرافیہ میں نوآبادیاتی ذہنیت کا پھیلاؤ ہے۔ عام آدمی کو سیاسی میدانوں سے دور رکھا جاتا ہے۔ جس کی وجہ سے چند اشرافیہ خاندانوں نے سیاست پر تسلط قائم کیا ہے۔ وہ عام آدمیوں کے لیے اپنی حیثیت برقرار رکھنے میں رکاوٹیں پیدا کرتے ہیں۔ اس نے سیاست کو متحرک سے زیادہ خاندانی اور اشرافیہ کا کھیل بنا دیا ہے۔ کیا عام آدمی صرف اپنی مراعات کے لیے ٹیکس ادا کرے؟

اہم بات یہ ہے کہ خیبرپختونخوا اور پنجاب کی صوبائی اسمبلیوں کی حالیہ تحلیل میں مروجہ مسائل کے حل کے سوا کچھ نہیں بلکہ تسلی بخش انا اور مذموم عزائم ہیں۔ یہ محض وفاقی حکومت پر ملک میں عام انتخابات کرانے کے لیے دباؤ ڈالنا ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ جمہوری نظام کو یقینی بنانے کے لیے عام انتخابات کا انعقاد بہت ضروری ہے۔ لیکن سوال یہ ہے کہ کیا ایسے  عزائم اور متعصب سیاست دانوں کے ساتھ ایسے متنازع انتخابات کے نتیجہ خیز نتائج برآمد ہوتے ہیں؟ افراد اور ریاستی کردار کو بالترتیب درست کرنے کے لیے سیاسی اصلاحات کی ضرورت ہے۔ سیاسی تزئین و آرائش کے ساتھ انتخابات عوام میں بہتری کی امید کی کرن روشن کر سکتے ہیں۔

الیکشن کمیشن  کے مطابق پاکستان میں 160 رجسٹرڈ سیاسی جماعتیں ہیں۔ کسی بھی سیاسی جماعت کے پاس عصری بحرانوں کے حوالے سے کوئی مبہم منشور نہیں ہے۔ ہر سیاسی جماعت پر اشرافیہ کا قبضہ ہے۔ ان جماعتوں کے اندر برائے نام داخلی جمہوری اصول ہیں۔ اس کا کیا مطلب ہے؟ کیا وہ صرف اقتدار کے لیے جدوجہد کرتے ہیں؟ کیا واقعی ریاستی مشکلات سے نمٹنے کے لیے متعدد سیاسی جماعتوں کی ضرورت ہے؟ اسی طرح ہر سیاسی جماعت سدا بہار سیاست دانوں کو جگہ فراہم کرتی ہے۔ وہ معزول اشرافیہ کو خوش آمدید کہتے ہیں۔ اگر ایک اشرافیہ پارٹی کا وفادار نہیں ہے تو وہ قومی مفادات کا وفادار کیسے ہو سکتا ہے؟ ایسے توقعات رکھنے والوں کے لیے دروازے بند کرکے سیاست سے اکھاڑ پھینکنا چاہیے۔

اسی طرح انتخابی معرکے کی شرائط اور نہ ہی کسی بھی اسمبلی کی رکنیت پر کوئی پابندی ہے۔ الیکشن لڑنے کے لیے اہلیت اور تجربہ کی ضرورت نہیں۔جبکہ حقیقت میں  الیکشن لڑنے کے لیے امیدوار کے پاس قابلیت اور تجربہ لازمی ہونا چاہیے۔ قومی سطح کی سیاست تک پہنچنے کے لیے اسے بلدیاتی اداروں اور صوبائی اسمبلی سے گزرنا چاہیے لیکن ہر سطح کے لیے شرائط کو محدود ہونا چاہیے۔ اس سے سیاست میں نئے چہروں اور ذہنوں کی راہ ہموار ہوگی۔

اس کے علاوہ بلدیاتی اداروں، صوبائی اور قومی اسمبلیوں کے انتخاب کے لیے عمر کی حدمقرر ہے لیکن انتخابات میں حصہ لینے کے لیے زیادہ عمر کی کوئی حد نہیں۔ عام طور پر سرکاری ملازم 60 سال کی عمر میں ریٹائر ہو جاتا ہے لیکن سیاست دان دماغی اور جسمانی کمزوریوں سے بالاتر ہو کر بھی محکموں پر قابض ہوتے ہیں۔ یہ نوجوانوں کے لیے سیاست میں رکاوٹ ہے۔

مزید برآں، آزاد امیدوار سیاسی توازن بگاڑ دیتے ہیں۔ یہ ملک میں سیاسی انجینئرنگ کو فروغ دیتا ہے۔ اگر کوئی الیکشن سے پہلے کسی سیاسی جماعت میں شامل نہیں ہو سکتا تو بعد میں اس کا استقبال نہیں کیا جانا چاہیے۔ ممکنہ طور پر، امیدوار کو محض ڈومیسائل کی بنیاد پر یا کم از کم ایک حلقے سے الیکشن لڑنے کی اجازت ہونی چاہیے۔ اس سے ٹیکس دہندگان کا وقت، توانائی اور پیسے کی بچت ہوگی۔ اگر ایک عام آدمی ڈومیسائل کے ضلع سے باہر کلاس فور کی آسامی حاصل نہیں کرسکتا اور نہ ہی مختلف علاقوں سے ایک ہی پوسٹ کے لئے درخواست دے سکتا ہے تو اشرافیہ کیوں نہیں؟

مزید یہ کہ خواتین پاکستان کی آبادی کا نصف ہیں۔ سیاسی تصورات کو متوازن کرنے کے لیے سیاست میں آدھا حصہ انہیں دینا ہوگا۔ سیاسی جماعتوں کو متعلقہ محکموں کے لیے ماہرین کی نامزدگیوں کا قبل از انتخاب ہونا چاہیے۔ اس سے کارکردگی، انصاف اور احتساب کو فروغ ملے گا۔

مختصراً، ریاست پاکستان کوتاریخی مشکلات اور موجودہ بحرانوں سے نکالنے کے لیے آئندہ عام انتخابات سے قبل آئینی ذرائع سے سیاسی اصلاحات کی اشد ضرورت ہے۔ سیاسی پولرائزیشن پر سیاسی اصلاحات کے ذریعے ہی قابو پایا جا سکتا ہے۔ درحقیقت مثبت سیاسی احساس ہی ملک کو ترقی اور خوشحالی کی طرف لے کر جاتاہے۔

3 thoughts on “پاکستان کی بقا کے لیے سیاسی اصلاحات ناگزیر ہیں”

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Latest Videos