Premium Content

اسلام آباد ہائی کورٹ نے جسٹس بابر ستار کے خلاف مہم کو ‘جھوٹ اور بدنیتی پر مبنی’ قرار دے دیا

Print Friendly, PDF & Email

اسلام آباد ہائی کورٹ نے جسٹس بابر ستار کی امریکی شہریت سے متعلق سوشل میڈیا مہم کو جھوٹ اور بدنیتی پر مبنی قرار دیا۔

قیاس آرائیوں کو ‘جھوٹ، بدنیتی پر مبنی اور توہین آمیز’ قرار دیتے ہوئے اسلام آباد ہائیکورٹ کے تعلقات عامہ کے افسر نے ایک بیان میں کہا، “جسٹس بابر ستار کی پاکستان کے علاوہ کبھی کوئی شہریت نہیں رہی”۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ ’’جسٹس ستار نے آکسفورڈ یونیورسٹی میں رہوڈز اسکالر کے طور پر قانون کی تعلیم حاصل کی اور ہارورڈ لاء اسکول سے گریجویٹ تعلیم حاصل کی۔انہوں نے نیویارک میں ایک قانونی فرم کے ساتھ وکیل کے طور پر کام کیا اور امریکہ میں رہتے ہوئے اور کام کرتے ہوئے، غیر معمولی قابلیت کے حامل شخص کے طور پر شمار ہونے کے بعد مستقل رہائشی کارڈ (جسے گرین کارڈ بھی کہا جاتا ہے) جاری کیا گیا۔ انہوں نے 2005 میں امریکہ میں اپنی ملازمت چھوڑ دی اور پاکستان واپس آئے اور تب سے پاکستان میں رہ رہے ہیں اور کام کر رہے ہیں۔

جسٹس بابر ستار کی اہلیہ اور بچے پاکستان اور امریکا کے شہری ہیں۔ وہ 2021 تک امریکہ میں مقیم تھے لیکن جسٹس بابر ستار کے اسلام آباد ہائیکورٹ کے جج کے طور پر تعینات ہونے کے بعد پاکستان واپس آئے اور اب اسلام آباد میں رہتے ہیں۔

جائیدادوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ جسٹس ستار کے پاس جو جائیدادیں ہیں، وہ امریکہ میں ہیں یا پاکستان میں، یا تو وراثت میں ملی تھیں یا وہ وکیل تھے جب کہ وہ ٹیکس گوشواروں میں رجسٹرڈ تھیں۔ جب سے وہ جج بنے ہیں انہوں نے کوئی جائیداد نہیں خریدی۔

مزید یہ کہ بیان میں کہا گیا ہے کہ جج کی والدہ نے 1992 میں راولپنڈی میں ایک اسکول قائم کیا تھا جس کی واحد ملکیت تھی جس میں ستار کی ملکیت میں کوئی دلچسپی نہیں تھی۔

جسٹس بابر ستار پاکستان اور امریکہ میں جائیدادوں کے مالک ہیں، جو ان کے ٹیکس گوشواروں میں درج ہیں جن کی جانچ پڑتال جوڈیشل کمیشن آف پاکستان نے جج کے عہدے پر فائز ہونے سے قبل کی تھی۔

تمام رئیل اسٹیٹ اثاثے جو اُن کے پاس ہیں یا تو وراثت میں ملےیا تب حاصل کیے گئے جب وہ وکیل تھے۔ جج کے طور پر اپنی تقرری کے بعد سے انہوں نے کوئی رئیل اسٹیٹ اثاثہ حاصل نہیں کیا۔ وہ کسی بھی کاروباری ادارے کے انتظام میں شامل نہیں ہیں ۔

Don’t forget to Subscribe our Youtube Channel & Press Bell Icon.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Latest Videos